اے این پی پختون لاشوں پر مزید ماتم کیلئے تیار نہیں، ایمل ولی

اے این پی پختون لاشوں پر مزید ماتم کیلئے تیار نہیں، ایمل ولی

بنوں(اسفندیار خان؍نمائندہ شہباز)عوامی نیشنل پارٹی خیبر پختونخوا کے صدر ایمل ولی خان نے کہا ہے کہ پختون اپنے پیاروں کی لاشوں پر مزید ماتم کرنے کی تاب نہیں رکھتے۔ ترقی یافتہ دنیا میں جانوروں کے حقوق کی پامالی بھی جرم گردانا جاتا ہے لیکن پختون ایسی ریاست کے باشندے ہیں جس میں انسان کے قتل پر بھی کوئی پوچھنے تک نہیں آتا۔ جانی خیل کیعوام اس شدید گرمی میں ایک پختون کی لاش رکھ کرانصاف کے لئے سراپا احتجاج ہیں لیکن ریاست کو تعزیت کرنے کی توفیق تک نصیب نہیں ہوتی۔پختونوں کے ساتھ جو کچھ ہورہا ہیریاست اور حکومت سب دیکھ رہی ہے لیکن جان بوجھ کر خاموش تماشائی ہے۔

 

بنوں جانی خیل میں دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر نے کہا کہ پختون قوم اپنے پیارون کی لاشیں اٹھا اٹھا کر تھک چکی ہے۔ پچھلے چالیس سال سے ایک ایسی جنگ کا شکار ہیں جس میں مرنے والا بھی پختون، مارنے والا بھی پختون اور بدنام ہونے والا بھی پختون ہے۔  اپنے پیاروں کو کھونے کا دکھ اے این پی سے بہتر اور کوئی محسوس نہیں کرسکتا۔عوامی نیشنل پارٹی جانی خیل کے عوام کے دکھ اور درد میں برابر کی شریک ہے۔

 

دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے ایمل ولی خان نے کہا کہ خطے میں ایک مرتبہ پھر حالات کو خراب کرنے کی تیاریاں ہورہی ہیں۔پاکستان افغانستان کے خلاف ماضی کی طرح پھر سے استعمال ہونے کی تیاری کررہا ہے۔اے این پی واضح کرتی ہے کہ اپنی مٹی کو افغانستان کے خلاف استعمال کرنیکی اجازت ہرگز نہیں  دیں گے۔ اے این پی باچا خان کے عدم تشدد پر یقین رکھتی ہے،جس طرح پاکستان میں امن کے خواہاں ہیں اسی طرح افغانستان کا امن بھی ہمارا خواب ہے۔ اسلام  امن اور سلامتی کا دین ہے۔ اسلام اور جہاد کا نام استعمال کرکے بے گناہ انسانوں کا قتل کرنے والے اسلام کی خدمت نہیں بلکہ اسلام کو بدنام کررہے ہیں۔ افغانستان میں جہاد کی ضرورت نہیں، جہاد کے خواہشمند فلسطین جاکر اسرائیل کیخلاف جہاد کرے۔

 

انہوں نے کہا کہ عوامی نیشنل پارٹی کا واضح موقف ہے کہ طالبان چاہے گڈ ہو یا بیڈدہشت گرد ہیں اور انسانیت کے دشمن ہیں ۔ عوامی نیشنل پارٹی کسی بھی دہشت گرد گروہ چاہے وہ کسی بھی نام سے ہو ،کبھی تسلیم کرنے کے لئے تیار نہیں ہوگی۔ اے این پی مطالبہ کرتی ہے کہ گڈ اور بیڈ کی تفریق چھوڑ دی جائے اور تمام دہشت گرد گروہوں کے خلاف خلاف یکساں کارروائیاں کی جائے۔

 

اس موقع پر اے این پی کے پارلیمانی لیڈر سردار حسین بابک، ایم پی اے نثار موند، سابق سینیٹر حاجی باز محمد خان ایڈووکیٹ، تیمور باز خان ایڈووکیٹ، ڈاکٹر شاہین ضمیر، ڈاکٹر خادم حسین، شاہ قیاز باچا ایڈووکیٹ، ناز علی خان وزیر نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس مٹی پر سرکاری سطح پر پختونوں کی نسل کشی کے منصوبے بنائے جا رہے ہیں ہم خوب جانتے ہیں کوئی ہماری آنکھیں بند نہ کریں ہم جانتے ہیں میڈیا آزاد نہیں، انسانی حقوق کی تنظیمیں بے زبان ہیں، پارلیمان خاموش، وہ عدالتیں خاموش جو بجلی کی لوڈ شیڈنگ پر سوموٹو لیتی ہے ،یہ جنگ پختونوں کے خلاف ہے یہ جنگ صرف جانی خیل پر نہیں بلکہ جب بھی دہشت گردی کا منصوبہ بنایا جاتا ہے تو انتخاب پختونوں کی سرزمین کا ہوتا ہے ہمیں وسائل کے لحاظ سے اتنے کمزور کیا گیا پختونوں کو تقسیم کیا گیا یہ اس لئے جو آج پختونوں کا حال رواں ہے پختونوں کے دشمنی کو سر بازار کہتے ہیں کہ چوک، حجرے اور گھر گھر جا کر امن کا نعرے بلند کریں گے ۔

 

دوسری جانب عوامی نیشنل پارٹی کے زیر اہتمام صوبہ بھر میں آج بروز جمعرات جبری گمشدگیوں، ٹارگٹ کلنگ اور لینڈ مائینز کے خلاف احتجاجی مظاہرے ہوں گے۔

 

صوبائی صدر ایمل ولی خان کی ہدایات پر اے این پی ضلعی ہیڈکوارٹرز میں پریس کلب کے سامنے اپنے احتجاجی مظاہرے ریکارڈ کرائیں گے، اس سلسلے میں تمام ضلعی تنظیموں کو ہدایات جاری کردی گئی ہیں۔

 

احتجاجی مظاہروں میں مکین، جانی خیل اور ہمزوئی میں دھرنے پر بیٹھے عوام سے اظہار یکجہتی بھی کی جائے گی۔ صوبائی صدر ایمل ولی خان چارسدہ میں احتجاجی مظاہرے کی قیادت کریں گے۔ احتجاجی مظاہروں میں عوامی نیشنل پارٹی کی تمام ذیلی تنظیمیں اور عام عوام بھرپور شرکت کرے گی۔