چیئرمین پی اے سی ڈی جی ہیلتھ سروسز خیبرپختونخوا پر برہم

چیئرمین پی اے سی ڈی جی ہیلتھ سروسز خیبرپختونخوا پر برہم

پشاور(نیوز رپورٹر)محکمہ صحت کے آڈٹ پیپروں کے حوالے سے صوبائی اسمبلی خیبر پختونخوا کی پبلک اکاونٹس کمیٹی کا اجلاس زیر سربراہی قائم مقام چیئرمین پی ایسے ایم پی اے ادریس خان, اسمبلی سیکریٹیریٹ کے کانفرنس ہال میں منعقد ہوا۔

 

ممبران پبلک اکاونٹس کمیٹی ایم پی ایز بابر سلیم سواتی،عنایت اللہ خان،ڈاکٹر آسیہ اسد،صلاح الدین خان نے بحث میں حصہ لیا جبکہ محکمہ صحت کی نمایندگی سپیشل سیکرٹری صحت عامر آفاق نے کی۔اجلاس میں محکمہ قانون, خزانہ, آڈٹ کے افسران اور صوبائی اسمبلی پی اے سی زیر سرپرستی سیکرٹری پی اے سی امجد علی خان موجود تھے.

 

ڈی جی ہیلتھ خیبر پختونخوا سروسز پشاور کی جانب سے فراہم کردہ نامکمل اور دیر سے دستاویزات فراہم کرنے پر پبلک اکاونٹس کمیٹی کا شدید برہمی کا اظہار۔چیئرمین پی اے سی نے اس بات کا نوٹس لیا کہ محکمہ کی جانب سے اجلاس کے دوران ورکنگ پیپر مہیا کیا جارہاہے جو کہ نہ صرف قوانین کی خلاف ورزی ہے بلکہ ممبران پی اے سی کا استحقاق مجروح کرنے کے مترادف ہے۔

 

چیئرمین پی اے سی ادریس خان نے محکمہ ہذا کو بتایا کہ پی اے سی ایک آئینی فورم ہے اور اسکے ساتھ مذاق کرنے والوں کے خلاف سخت کاروائی کی سفارش کرینگے۔سیکرٹری پی اے سی امجد علی خان نے فورم کو بتایا کہ محکمہ صحت کی لاپرواہی کی وجہ سے دو بار انتظامی سیکرٹری کو ناپسندیدگی کا خط جاچکا ہے جس پر کوئی کارروائی نہیںکی گئی چیئرمین پی اے سی نے ہدایات جاری کی کہ چیف سیکرٹری کو اس بارے خط لکھ کر آگاہ کیا جائے اور دو ہفتوں کے اندر غفلت کا مظاہرہ کرنے والے افراد کا تعین کرکے ان کے خلاف محکمانہ کاروائی کی جائے۔

 

سپیشل سیکرٹری صحت نے اپنے ماتحت ادارے کی جانب سے کی گی اس غفلت پر فورم سے معذرت کی۔اس موقع پر کمیٹی نے محکمہ خزانہ کو بھی ہدایات جاری کی کہ ورکنگ پیپر میں کاپی پیسٹ سے کام نہ چلائیں بلکہ ضروری تکنیکی رائے دیں تاکہ پی اے سی اس کی روشنی میں فیصلہ کرسکے۔