صحافتی آزادی کیلئے ہر جدوجہد میں ساتھ دینگے، امیر حیدر ہوتی 

صحافتی آزادی کیلئے ہر جدوجہد میں ساتھ دینگے، امیر حیدر ہوتی 

پشاور(آ ن لائن) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی سینئر نائب صدر امیرحیدر خان ہوتی نے میڈیا کو کنٹرول کرنے کے مجوزہ قانون پی ایم ڈی اے کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ میڈیا کی آزادی نہیں قوم کی آزادی کا مسئلہ ہے۔ میڈیا آزاد نہیں ہو گا تو سیاست اور سچ بھی آزاد نہیں ہوگی، صحافتی آزادی کیلئے ہر جدوجہد میں ساتھ دیں گے۔

 

نیشنل پریس کلب اسلام آباد میں ملک بھر کے صحافی قیادت سے گفتگو کرتے ہوئے امیرحیدر خان ہوتی نے کہا کہ اے این پی پارلیمنٹ میں اور پارلیمنٹ سے باہر میڈیا کی آزادی کیلئے صحافتی برادری کے ساتھ ہے۔ میڈیا پر پابندیوں کا بل جس کی بھی سوچ ہے ناکام ہو گی، جو لوگ یہ بل لانا چاہتے ہیں یہ ان کے زوال کا سبب بنے گا۔ جعلی خبریں میڈیا، سیاسی جماعتوں اور معاشرے کیلئے نقصان دہ ہیں۔جعلی خبروں کا بہانہ بنا کر میڈیا کو کنٹرول کرنے کی حمایت نہیں کرسکتے، نہ ہی اجازت دیں گے۔

 

انہوں نے کہا کہ عوامی نیشنل پارٹی آج بھی اپنے بزرگوں کے اصولوں پر کاربند رہتے ہوئے آزاد میڈیا چاہتی ہے۔پرویزمشرف نے عدلیہ کو کنٹرول کرنے کی کوشش کی،یہی فیصلہ ان کو لے ڈوبا تھا۔اگر سیاسی جماعتوں نے سچائی کے ساتھ میڈیا کا ساتھ دیا تو یہ قانون لانیوالوں کے زوال کا سبب بنے گا۔

 

امیرحیدر خان ہوتی نے کہا کہ بہتر یہی ہوگا کہ یہ قانون لانیوالے نظرثانی کریں ، اگر قانون لانا بھی ہے تو تمام سٹیک ہولڈرز کو اعتماد میں لینا ہوگا۔پارلیمنٹ واحد راستہ ہے جہاں قانون سازی ہوسکتی ہے، اگر پارلیمنٹ کو بائی پاس کیا جائیگا تو یہ جمہوریت کے خلاف سازش ہوگی۔اس موقع پر صحافتی ایکشن کمیٹی کے سربراہ افضل بٹ ، سینئر صحافی مظہرعباس اور نیشنل پریس کلب کے صدر شکیل انجم نے اے این پی قیادت کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ اے این پی نے ہمیشہ آزادی صحافت کیلئے آواز اٹھائی ہے۔

 

نیشنل پریس کلب کے صدر شکیل انجم نے کہا کہ اے این پی قیادت اپنے بزرگوں کی پیروی کرتے ہوئے حق، سچ، جمہوریت اور میڈیا کی آزادی کے ساتھ کھڑی ہے جس پر پوری صحافتی برادری ان کا شکریہ ادا کرتی ہے۔اے این پی وفد میں سیکرٹری جنرل میاں افتخارحسین، مرکزی ترجمان زاہد خان، صوبائی صدور اور مرکزی کابینہ کے اراکین شامل تھے۔