نااہل حکمرانوں نے عوام کا جینا حرام کر دیا ہے، سردارحسین بابک

نااہل حکمرانوں نے عوام کا جینا حرام کر دیا ہے، سردارحسین بابک

پشاور۔۔۔اے این پی کے صوبائی جنرل سیکرٹری و پارلیمانی لیڈر سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ حکومت کی غلط منصوبہ  بندی اور غیر ذمہ دار طرز حکمرانی نے عوام کا جینا حرام کر دیا ہے۔ بجلی، گیس اور تیل کی قیمتوں میں بار بار اضافے نے عوام کے اوسان خطا کر دیئے ہیں۔


 

باچا خان مرکز پشاور سے جاری بیان میں اے این پی کے صوبائی جنرل سیکرٹری نے کہا ہے کہ ہمارے صوبے کے ساتھ ہونے والی ناانصافی کا تماشہ کرنے والی صوبائی حکومت عوام کو منہ دکھانے کے قابل نہیں رہی ہے۔ناجائز طریقے سے اقتدار میں آئے ہوئے ناتجربہ کاروں نے صوبے اور ملک کو انتظامی بدحالی اور مالی دیوالگی سے دوچار کر دیا ہے۔ آئین کی پامالی اور قانون کی دھجیاں اُڑائی جا رہی ہیں۔ حکمران جماعت کے اراکین نے خاموشی کا روزہ رکھا ہوا ہے۔

 

انہوں نے مزید بتایا کہ عوام سے جینے کا حق چھینا گیا ہے۔ جرائم میں اضافہ ہورہا ہے اور صوبے کو پسماندگی کے دلدل میں دھکیل دیا گیا ہے۔ ہمارے صوبے میں پیدا ہونے والے قدرتی آمدن کے ذرائع ہم سے چھینا گیا ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ عوام کو بتایا جائے کہ حکمران کس کے اشاروں پر چل رہے ہیں؟ عوام سے جینے کا حق کیوں چھینا گیا ہے؟ آئین کی پامالی کیوں ہو رہی ہے؟ صوبے کو حقوق کیوں نہیں دیئے جا رہے ہیں؟ صوبائی حکومت خاموش تماشائی کا کردار کیوں ادا کر رہی ہے؟

 

اے این پی رہنما نے مزيد کہا کہ  اے این پی کی طرف سے بار بار صوبائی اسمبلی میں پارلیمانی جرگے کی تشکیل پر حکومت خاموش رہتی ہے۔ پارلیمانی جرگے کے ذریعے مرکزی حکومت سے پوچھا جا سکتا ہے کہ وہ کیوں صوبے کو اپنی بجلی اور دیگر آمدن کے ذرائع کے منافع سے انکاری ہے؟

 

سردار حسین بابک نے کہا کہ انہوں نے کہا کہ مرکزی حکومت صوبے کو اپنی آئینی حقوق سے کب تک محروم رکھے گا؟ ہمارے صوبے کے غریب عوام بھوک سے مر رہے ہیں اور مرکزی حکومت ہمارے صوبے کے ذرائع آمدن پر ملکی نظام چلا رہے ہیں۔ صوبے کا انفراسٹرکچر تباہ ہو کر رہ گیا ہےاور سڑکیں کھنڈرات کا نقشہ پیش کر رہی ہیں۔ محکمہ داخلہ کو پیشہ ورانہ انداز میں چلانے کیلئے فنڈز دستیاب نہیں۔ صحت اور تعلیم کا شعبوں کو تباہ کر کے رکھ دیا گیا ہے۔ ترقی کانام و نشان نظر نہیں آرہا اور اپوزیشن کو دیوار سے لگادیاگیا ہے۔ اپوزیشن اراکین کے علاقوں سے کروڑوں عوام کو نظر انداز کر دیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ انصاف کے نام پر بننے والی حکومت نے صوبے کے تاریخی پختون روایات کا جنازہ نکال دیا ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ بلدیاتی انتخابات کے دوسرے مرحلے میں عوام کو یکجہتی کا مظاہرہ کرنا چاہیئے اور ان عوام دُشمن حکومتی پارٹی کے اُمیدواروں کی ضمانتیں ضبط کرانی چاہیئے۔ صوبے کے باشعور عوام کو صوبے کے غریب عوام کی وکالت کرنے والی عوامی نیشنل پارٹی کے انتخابی نشان لالٹین کو کامیاب بنانا چاہیئے۔