لاہور ٹیسٹ: آسٹریلیا نے پاکستان کیخلاف 5 وکٹوں پر 232 رنز بنالیے

لاہور ٹیسٹ: آسٹریلیا نے پاکستان کیخلاف 5 وکٹوں پر 232 رنز بنالیے

آسٹریلیا نے پاکستان کے خلاف تیسرے ٹیسٹ میچ کے پہلے روز کھیل کے اختتام پر عثمان خواجہ اور اسٹیو اسمتھ کی نصف سنچریوں کی بدولت 5 وکٹوں کے نقصان پر 232رنز بنا لیے ہیں۔

 

لاہور کے قذافی اسٹیڈیم میں کھیلے جا رہے سیریز کے تیسرے اور آخری ٹیسٹ میچ میں آسٹریلیا کے کپتان پیٹ کمنز نے ٹاس کا سکا اپنی ٹیم کے حق میں پلٹنے کے بعد پہلے بلے بازوں کو آزمانے کا فیصلہ کیا ہے۔

 

آسٹریلیا نے اننگز کا آغاز کیا تو اننگز کے تیسرے ہی اوور میں شاہین شاہ آفریدی کی گیند وکٹوں کے عین سامنے ڈیوڈ وارنر کے پیڈ پر لگی اور وہ آؤٹ قرار دیے گئے۔

 

ابھی آسٹریلین ٹیم اس نقصان سے سنبھلی بھی نہ تھی کہ ایک گیند بعد ہی مارنس لبوشین کھاتا کھولے بغیر ہی شاہین کی دوسری وکٹ بن گئے۔

اسکور 41 تک پہنچا ہی تھا کہ نعمان علی کو باؤلنگ کے لیے لایا گیا اور ان کی دوسری گیند پر گیند عثمان خواجہ کے بلے کا باہری کنارہ لیتی ہوئی سلپ میں کھڑے بابر اعظم کے پاس گئی لیکن وہ کیچ نہ تھام سکے۔

 

اگلی ہی گیند پر پاکستان کو ایک اور وکٹ لینے کا موقع ملا لیکن اس مرتبہ نعمان اپنی ہی گیند پر اسمتھ کا کیچ نہ لے سکے۔

 

دونوں کھلاڑیوں نے اس موقع کا بھرپور فائدہ اٹھایا اور کھانے کے وقفے تک مزید کوئی وکٹ نہ گرنے دی۔

 

دونوں کھلاڑیوں نے عمدہ بیٹنگ کا مظاہرہ کرتے ہوئے پاکستانی باؤلرز کا ڈٹ کر سامنا کیا اور دوسرے سیشن میں میزبان ٹیم کو وکٹ سے محروم رکھا۔

 

8رنز پر دو اہم وکٹیں گرنے کے بعد عثمان خواجہ کا ساتھ دینے اسٹیو اسمتھ آئے اور دونوں نے بتدریج اسکور کو آگے بڑھانا شروع کیا۔

تاہم چائے کے وقفے کے فوراً بعد نسیم شاہ نے قومی ٹیم کو اہم کامیابی دلاتے ہوئے اسمتھ کو چلتا کردیا جنہوں نے آؤٹ ہونے سے قبل 169 گیندوں پر چھ چوکوں کی مدد سے 59رنز بنائے۔

 

دوسرے اینڈ پر موجود عثمان خواجہ نے بھی اپنی نصف سنچری مکمل کی اور سیریز مین اپنی بہترین فارم کا سلسلہ جاری رکھا۔

 

تاہم ساجد خان نے پاکستان کو اہم کامیابی دلاتے ہوئے 91 رنز بنانے والے عثمان خواجہ کو بابراعظم کے ہاتھوں کیچ کروایا۔

 

عثمان خواجہ نے 219 گیندوں کا سامنا کیا اور 91 رنز کی اننگز میں 9 چوکے اور ایک چھکا شامل تھا تاہم وہ محض 9 رنز کے فرق سے سنچری مکمل نہیں کر پائے۔

 

نسیم شاہ نے ٹریویس ہیڈ کی 26 رنز کی اننگز کا خاتمہ کیا اور یوں آسٹریلیا کی 5 وکٹیں 206 رنز پر گر گئیں۔

 

آسٹریلیا نے تیسرے ٹیسٹ کے پہلے روز کے اختتام پر 5 وکٹوں پر 232 رنز بنا لیے۔

 

کیمرون گرین 20 اور الیکس کیری 8 رنز بنا کر کھیل رہے ہیں۔

اس سے قبل پاکستان نے میچ کے لیے ٹیم میں ایک تبدیلی کی ہے اور فہیم اشرف کی جگہ نسیم شاہ کو فائنل الیون کا حصہ بنایا گیا ہے۔

یہ میچ اس لحاظ سے یادگار ہے کہ یہ لاہور کے تاریخی اسٹیڈیم میں 2009 کے بعد کھیلا جانے والا پہلا ٹیسٹ میچ ہے۔