حکومت کی ناقص پالیسیوں اور مہنگائی کی وجہ سے عوام کی تکالیف میں ہیں، میاں افتخارحسین

حکومت کی ناقص پالیسیوں اور مہنگائی کی وجہ سے عوام کی تکالیف میں ہیں، میاں افتخارحسین

نوشہرہ۔۔۔ عوامی نیشنل پارٹی کے سیکرٹری جنرل میاں افتخارحسین نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت کی ناقص پالیسیوں کی وجہ سے عوام کی تکالیف میں روز بروز اضافہ ہورہا ہے۔یہی حکمران کہتے تھے کہ مہنگائی بڑھتی ہے تو حکمران چور ہیں، آج مہنگائی آسمان سے باتیں کررہی ہیں تو چور کون ہیں؟

 

نوشہرہ رسالپور میں کنٹونمنٹ بورڈ انتخابات کے انتخابی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے میاں افتخارحسین نے کہا کہاگر پی ٹی آئی ایک بار پھر کامیا ب ہوتی ہے تو اس کا مطلب یہی ہوگا کہ عوام اس مہنگائی اور بے روزگاری سے خوش ہیں۔مہنگائی، بے روزگاری اور عوامی مشکلات سے نجات کیلئے پی ٹی آئی کو مسترد کرنا ہوگا اور اے این پی کا ساتھ دینا ہوگا۔ ایک کروڑ نوکریاں دینے والے حکمرانوں نے لاکھوں لوگوں کو بے روزگار کیا۔پہلے سے سرکاری نوکریوں پر موجود افراد سے پیسے لے کر ان کو دوبارہ اسی نوکری پر لینے کی پیشکش ہورہی ہیں۔

عمران خان غریب کو ختم کر کے غربت کو ختم کرنے کی بھرپور کوشش کررہا ہے۔ میاں افتخارحسین نے کہا کہ ہسپتالوں کی حالت زار دیکھ کر تبدیلی کا اندازہ ہوجاتا ہے، سرکاری اور نجی ہسپتالوں میں ایک جیسے خرچ پر علاج کیا جارہا ہے۔صحت کارڈ کے نام پر عوام کو دھوکہ دیا جاچکا ہے، پشاور کے بڑے ہسپتالوں میں پہلے مفت علاج ہوتا تھا۔زندگی بچانے والی ادویات تک ہسپتالوں میں موجود نہیں، پھر کہتے ہیں یہ نیا پاکستان ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ سلیکٹرز سے پوچھتے ہیں کہ عوام پر اس قسم کے حکمران مسلط کر کے کونسا مقصد حاصل کیا گیا؟ کیا عمران خان بتانا پسند فرمائیں گے کہ بنی گالہ کی قبضہ شدہ زمین کو کس طرح ریگولرائز کیا گیا؟ حکومت میں بیٹھے وزراء پر کیسز ہیں لیکن ان کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی جارہی۔

 

اے این پی کے سیکرٹری جنرل کا کہنا تھا کہ فارن فنڈنگ کیس کا فیصلہ ہوجائے تو ساری کی ساری پی ٹی آئی ختم ہوجائیگی۔پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس میں اپنے ہی بنیادی رکن کے سوالات کے جواب نہیں دے سکتی۔آئی ایم ایف اور ورلڈبینک سے ایسے معاہدے کئے گئے کہ پورا ملک ہی گروی رکھ دیا گیا۔پاکستان کی حقیقی آزادی، مہنگائی ختم کرنے، روزگار کی بحالی اور عوامی مفاد میں اس حکومت کو مسترد کرنا ہوگا۔