ممنوعہ فنڈنگ کیس،ثاقب نثار کا صادق اور امین سرٹیفائیڈ جھوٹا ثابت ہوگیا۔ اسفندیارولی

ممنوعہ فنڈنگ کیس،ثاقب نثار کا صادق اور امین سرٹیفائیڈ جھوٹا ثابت ہوگیا۔ اسفندیارولی

 
پشاور(شہاز نیوز)عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی صدر اسفندیارولی خان نے کہا ہے کہ ممنوعہ فنڈنگ کیس کے بعد ثاقب نثار کا صادق اور امین سرٹیفائیڈ جھوٹا ثابت ہوگیا ہے۔ 

 

الیکشن کمیشن نے ثابت کردیا کہ نہ صرف ممنوعہ فنڈنگ ہوئی بلکہ جھوٹا بیان حلفی جمع کرایا گیا اور اکانٹس بھی چھپائے گئے۔ امید ہے آئین اور قانون کے مطابق مزید کارروائی بھی مکمل کی جائیگی۔ 

 

الیکشن کمیشن کی جانب سے پی ٹی آئی کے ممنوعہ فنڈنگ کے فیصلے پرردعمل دیتے ہوئے اسفندیارولی خان نے کہا کہ جھوٹا بیان حلفی جمع کرنا ثابت کرتا ہے کہ ایک سیاسی جماعت کے سربراہ نے جھوٹ بولا۔اب ضرورت اس بات کی ہے کہ آرٹیکل 62،63 کا اطلاق مخصوص جماعتوں کی بجائے بلاتفریق کیا جائے۔

 

اے این پی سربراہ نے کہا کہ غیرملکی کمپنیوں سے رقم کی وصولی الیکشن ایکٹ 2017 کی خلاف ورزی ہے۔ایک وزیراعظم کو تنخواہ نہ لینے پر نااہل قرار گیا اب تو جھوٹ بولنا ثابت ہوچکا ہے، کیا اب بھی انکے خلاف کارروائی نہیں ہوگی؟ 

 

فنانشل ٹائمز نے بھی تصدیقی مہر ثبت کردیا ہے، پی ٹی آئی غیرملکی پیسوں پر چلنے والی کمپنی ہے۔

 

انہوں نے سوال اٹھایا کہ 34غیرملکی کمپنیوں نے اگر پی ٹی آئی کو فنڈ کیا ہے تو ان کمپنیوں کو کیا دیا گیا؟ غیرملکی ایجنڈے اور فنڈنگ پر چلنے والی کمپنی کا نام پی ٹی آئی ہے۔امید ہے کہ وفاقی حکومت اس فیصلے کی روشنی میں اپنی ذمہ داری پوری کرے گی۔