جنگلات کی حفاظت کرنا حکومت کی ذمہ داری ہے،ایمل ولی خان

جنگلات کی حفاظت کرنا حکومت کی ذمہ داری ہے،ایمل ولی خان

پشاور۔۔۔عوامی نیشنل پارٹی خیبرپختونخوا کے صدر ایمل ولی خان نے کہا ہے کہ پشتونوں کے جنگلات ہزاروں سال پرانے ہیں، انکی حفاظت حکومت اور ریاست کی ذمہ داری ہے۔پختونخوا، بلوچستان اور مرکزی حکومت کی خاموشی سے ثابت ہورہا ہے کہ پشتون خطے کا درد کوئی محسوس نہیں کررہا۔

 

بلوچستان اور خیبرپختونخوا کے سنگم پر کوہ سلیمان میں لگی آگ نہ بجھانے پر ردعمل دیتے ہوئے ایمل ولی خان نے کہا کہ کوہ سلیمان میں لگی آگ نہ بجھانا غفلت نہیں ارادتاً پشتون خطے کے وسائل کا ضیاع ہے۔اب بھی وقت ہے کہ اگر آپ کے پاس وسائل نہیں تو بین الاقوامی برادری سے اپیل کریں، آگ ابھی تک لگی ہوئی ہے۔

 

اے این پی کے صوبائی صدر کا کہنا تھا کہ گذشتہ دو سال سے پختونخوا کے مختلف جنگلات میں بھی مسلسل آگ لگنے کے واقعات سامنے آرہے ہیں۔اسی آگ میں جانور، قیمتی درخت اور نایاب پرندے جل رہے ہیں، ذمہ داری لینے والا کوئی نہیں۔بلوچستان اور پختونخوا میں چلغوزے، دیار، صنوبر، بنج کے درخت کھربوں کے آمدن کے ذرائع ہیں۔یہ درخت اور جنگلات لاکھوں لوگوں کے آمدن کا ذریعہ تھا جو ختم کردیا گیا۔

 

ایمل ولی خان نے کہا کہ جنگلات بنانے میں دہائیاں لگتی ہے، ایسی غفلت کہیں بھی قابل برداشت نہیں۔یہاں پر ایک ایسی ذہنیت موجود ہے جو پشتونوں کی سرزمین سے قبرستان بنانا چاہتی ہے۔ایسے حالات میں ایمرجسنی لگائی جاتی ہے اور فوری اقدامات اٹھائے جاتے ہیں۔ صوبائی صدر اے این پی کا مزید کہنا تھا کہ پہلے روز اگر حکومتیں جاگ جاتی، مختلف اداروں سے مدد مانگی جاتی تو کوہ سلیمان میں یہ تباہی نہ ہوتی۔ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ نقصانات کا تخمینہ لگایا جائے اور غفلت کا مظاہرہ کرنیوالوں کو قرارواقعی سزا دی جائے۔