طالبان کا ملا محمد حسن کو وزیر اعظم اور برادر کو ڈپٹی وزیر اعظم  مقرر کرنے کا فیصلہ

طالبان کا ملا محمد حسن کو وزیر اعظم اور برادر کو ڈپٹی وزیر اعظم  مقرر کرنے کا فیصلہ


کابل: افغان طالبان نے ملا محمد حسن اخوند کو وزیراعظم جبکہ ملا عبدالغنی برادر کو ڈپٹی وزیر اعظم مقرر کرنے کافیصلہ  کرلیا ۔ 

 

افغان  طالبان ذرائع کے مطابق طالبان کے امير شیخ ہیبت اللہ اخوندزادہ نے  ملا محمد حسن اخوند کو  وزير اعظم نامزد کيا ہے جب کہ ملا عبدالغنی برادر ان کے نائب کے طور پر کام کریں گے۔ تاہم، ذرائع  نے یہ بھی بتایا کہ برادرکو وزیر اعظم کے طور پر بھی مقرر کیا جا سکتا ہے ۔

 

ذرائع نے بتایا کہ طالبان کی حکومت کا ماڈل ایران کے طرز حکمرانی کی طرح ہوگا جس میں ہیبت اللہ اخوندزادہ ملک کے سپریم لیڈر رہیں گے ۔

 

طالبان کے ایک اور سینیئر رکن نے بتایا کہ حقانی نیٹ ورک کے سربراہ سراج الدین حقانی کو وفاقی وزیر داخلہ بنانے کی تجویز ہے۔ انہیں مشرقی صوبوں جہاں حقانی نیٹ ورک کا زیادہ زور ہے وہاں کے گورنرز نامزد کرنے کا بھی اختیار دیا گیا گیا۔ ان صوبوں میں پکتیہ، پکتیکا، خوست، گردیز، ننگر ہار اور کنڑ شامل ہیں۔ 

 

اسی طرح طالبان کے بانی ملا عمر کے بیٹے ملا یعقوب کی افغانستان کے وزیر دفاع کے طور پر منظوری دی گئی ہے ۔ ملا یعقوب شیخ ہیبت اللہ کے مدرسے میں ان کے طالب علم رہے ہیں۔

 

طالبان ذرائع کے مطابق ذبیح اللہ مجاہد کو پہلے وزیر اطلاعات کے لیے منتخب کیا گیا تھا تاہم قیادت نے اپناارادہ تبدیل کیا اور اب انہیں سربراہ ریاست ملا محمد حسن اخوند کا ترجمان بنائے جانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

 

طالبان ذرائع کا بتانا ہے کہ ملا امیر خان متقی کو وزیر خارجہ نامزد کیا گیا ہے ۔ طالبان کے اندرونی ذرائع کہتے ہیں کہ بعض ذمہ داریوں کے حوالے سے تنظیم کے اندر معمولی مسائل تھے جنہیں حل کرلیا گیا ہے۔

 

ذرائع کے مطابق طالبان نے نئی حکومت کی تیاری مکمل کرلی ہے اور اس کا اعلان آئندہ دو، تین دن میں کردینگے۔ 

 

خیال رہے کہ ملا محمد حسن اخوند اس وقت طالبان کی طاقتور فیصلہ ساز رہبری شوریٰ کے سربراہ ہیں ۔ ان کا تعلق قندھار سے ہے جہاں سے طالبان کا بھی آغاز ہوا تھا۔ وہ طالبان کی مسلح تحریک کے بانیوں میں سے ہیں۔

 

واضح رہے کہ اس سے پہلے  افغان میڈیا نے پہلے اطلاع دی تھی کہ اخوند زادہ وزیر اعظم بنیں گے ، جبکہ ملا برادر  وزیر خارجہ بنیں گے ، اور خلیفہ حقانی (طالبان رہنما جلال الدین حقانی کے بیٹے) وزیر داخلہ بنیں گے۔