افغانستان: محرم کے بغیر خواتین کے سفر پر پابندی عائد

افغانستان: محرم کے بغیر خواتین کے سفر پر پابندی عائد

افغانستان میں طالبان حکومت نے خواتین کے قریبی رشتے دار کے بغیر طویل فاصلے تک سفر کرنے پر پابندی عائد کردی۔

 

وزارت امربالمعروف اور نہی عن المنکر نے  ٹرانسپورٹ مالکان کو ہدیات کی ہے کہ مختصر فاصلے کے علاوہ طویل سفر کےلیے بھی قریبی رشتہ دار کے بغیر کسی خاتون کو ٹرانسپورٹ سروس مہیا نہ کی جائے۔

 

اعلامیہ میں تمام گاڑیوں کے مالکان سے یہ بھی کہا گیا ہے کہ وہ صرف حجاب پہننے والی خواتین کو ہی بٹھائیں۔ بیان میں لوگوں  کو اپنی گاڑیوں میں موسیقی بجانا بند کرنے کی بھِی ہدایت کی گئی ہے۔

 

وزارت کے ترجمان صادق عاکف مہاجر نے اتوار کو خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کو بتایا کہ خواتین کو کسی قریبی رشتہ کے بغیر 72 کلومیٹر سے زیادہ سفر کی جازت نہیں دینی چاہیے۔

 

خیال رہے کہ اگست میں اقتدار سنبھالنے کے بعد طالبان نے پہلے دور اقتدار کے مقابلے میں نرم حکمرانی کا وعدہ کرنے کے باوجود خواتین اور لڑکیوں پر روزگار اور پڑھائی سمیت مختلف پابندیاں عائد کی ہیں۔

 

کئی صوبوں میں طالبان حکام کو اسکول دوبارہ کھولنے پر آمادہ کیا گیا ہے لیکن بہت سی لڑکیاں اب بھی تعلیم سے محروم ہیں۔

 

اس ماہ کے اوائل میں طالبان کے سپریم لیڈر ملا ہیبت اللہ نے خواتین کے حقوق کے حوالے سے ایک حکم نامہ جاری کیا تھا جس میں حکومت کو خواتین کے حقوق نافذ کرنے کی ہدایت کی گئی تھی تاہم اس حکم نامے میں بھی لڑکیوں کی تعلیم تک رسائی کا کوئی ذکر نہیں تھا۔