اپوزیشن نے دوبئی ایکسپو میں کیئے گئے معاہدوں کو جعلی قرار دیں دیا

اپوزیشن نے دوبئی ایکسپو میں کیئے گئے معاہدوں کو جعلی قرار دیں دیا

پشاور(نیوزرپورٹر)خیبرپختونخوااسمبلی میں اپوزیشن کی بورڈآف انوسٹمنٹ اینڈٹریڈکے چیف ایگزیکٹیو افیسر کی کارکردگی پر تنقید،دوبئی ایکسپومیں کئے معاہدوں کو جعلی قراردیدیا،

 

جمعہ کے روز وقفہ سوالات کے دوران ایم پی اے شگفتہ ملک نے کہاکہ سرمایہ کاری بورڈکاچیف ایگزیکٹیو پنجاب سے آیا ہے جس کی لاکھوں میں تنخواہ ہے یہ شخص خود کو سی پیک کاماہرسمجھتاہے جولاہور اور اسلام آبادمیں بریفنگ کے علاوہ کہیں نہیں جاتا اس کے علاوہ بورڈکے زیرنگرانی دوبئی ایکسپومیں ایم اویو برائے نام سائن ہوئے ہیں ،مزدوری کیلئے جانیوالے لوگوں کو بٹھاکر بغیردستخط کے معاہدے کئے گئے ،

 

دوبئی ایکسپو پر خیبر پختونخوا صوبے کا کروڑوں روپے کرچ کرنے کے باوجود صوبے میں تاحال کوئی سرمایہ کاری نہ ہوسکی جبکہ تمام ایم او یوز صرف کاعذی کاروائی تک محدو د رہی،

 

ایکسپومیں غیرمتعلقہ افراد گئے جنہیں صوبے کی ثقافت کاکوئی علم نہیں بلکہ صرف ڈبنگ اورلپسنگ کیلئے لوگوں کو لے جایاگیا پشتون روایات ظاہر کرنے کیلئے نمائش میں کلاشنکوف دکھایاگیا آیا جس پر وہاں احتجاج بھی ہوا آیایہ پیغام دیاجارہاہے کہ پختونوں کی ثقافت کلاشنکوف ہے ؟

 

 وزیرمحنت شوکت یوسفزئی جواب دیتے ہوئے کہاکہ سرمایہ کاری کیلئے آیا ضروری ہے کہ بندہ پشتوبولے گاہمیں زبانوں کولے کر تنقیدنہیں کرنی چاہئے ورنہ پنجاب اوردیگرصوبے کے قابل افسران یہاں آنے سے کترائینگے

 

 وزرادوبئی نمائش کیلئے خود گئے تھے مقامی لوگوں کو سرمایہ کاری کیلئے صوبے کے مواقع شیئر کئے گئے کوریا اوردیگرممالک کی ٹیموں نے نہ صرف سرمایہ کاری میں دلچسپی ظاہر کئے بلکہ یہاں بھی آئے ایک بلین ڈالر پرمشتمل ایم اویوسائن ہوئے تھے سب سے زیادہ رش صوبے کے پویلین میں رہا نمائش سے پہلے تمام سٹیک ہولڈرکوبریفنگ دی جاچکی ہے صوبے کے کلچر کی ترویج کیلئے ٹیم نے بہترین خدمات سرانجام دیں دوبئی ایکسپوکے ذریعے لوگوں کو خیبرپختونخواکلچر سے روشناسی ملی خیبرپختونخوادہشتگردی کاشکار رہا لیکن اب امن قائم ہوچکاہے اورسرمایہ کاری کیلئے ماحول سازگار ہے

 

واضح رہے کہ خیبر پختونخوا حکومت نے دوبئی ایکسپو میںصوبے میں 8 ارب ڈالر کے معاہدوں کا دعوا کیا تھا کہ اس ایکسپو میں خیبر پختونخوا حکومت نے صوبے میں سرمایہ کاری کے لئے 8 ارب روپے معاہدوں پر دستخط کیئے ہیں  جبکہ صوبائی وزیر نے اسمبلی فلور پر ایک ارب ڈالر معاہدوں کا دعوا کیا ،وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا اور صوبائی وزراء کا صوبے میں سرمایہ کاری کے اعداد و شمار میں سات ارب ڈالر کا تضاد پایا جاتا ہے