امن کے بغیر صوبے میں سیاحت کو فروع نہیں ملے گا۔ریحانہ اسماعیل

امن کے بغیر صوبے میں سیاحت کو فروع نہیں ملے گا۔ریحانہ اسماعیل

پشاور(نیوز رپورٹر)وزیرمحنت شوکت یوسفزئی نے کہاہے کہ گزشتہ چارسالوں کے دوران صوبے میں سیاحت کو فروغ ملاہے جس سے ریونیومیں بھی اضافہ ہوا ہے ملاکنڈ اور ہزارہ ڈویژن میں ورلڈبینک کے اشتراک سے مزید130کلومیٹر سڑکوں کا نیٹ ورک تعمیرکیاجائے گا کہیں سیاحتی جگہوں پر کچی سڑکیں پہنچ چکی ہیں فیسیلیٹیشن کے کام ہورہے ہیں ٹورازم پولیس کاقیام عمل میں لایاگیاہے کالاش،کالام اورکمراٹ ڈویلپمنٹ اتھارٹیز بن رہی ہیں ملکی وغیرملکی سیاحوں کوراغب کرنے کیلئے ہائی سٹینڈرڈسہولیات فراہم کی جائیں گی ،صوبے کے خوبصورت سیاحتی مقامات پر کیمپنگ پوڈلگانے کیلئے کیمپنگ پیراڈائزکے ایک منفردماحولیاتی سیاحتی منصوبے کوصوبہ بھرکے دس نئے سیاحتی علاقوں تک بڑھادیاگیاہے تحصیل گورگٹھڑی میں پانچ سوسالہ پراناقائم مندرکو تزین وآرائش کیلئے متعلقہ ڈیپارٹمنٹ کے ساتھ بات کی جائے گی 

 

قبل ازیں ریحانہ اسماعیل نے سوال کیاکہ جب امن قائم نہیں ہوگا تو سیاحت کو فروغ کیسے ملے گا آئے روز سوات،دیراور وزیرستان میں حملے ہوتے ہیں اگرامن کی طرف نہیں بڑھیں گے توکوئی بھی شعبہ ترقی نہیں کرسکتا سیاحت کے فروغ کیلئے سڑکوں کی تعمیرضرورہونی چاہئے گلیات میں صفائی کاناقص انتظام نہیں جہاں واش رومزتک نہیں اگربنیادی سہولیات نہیں دینگے تو کیسے سیاحت کو فروغ اورآمدنی حاصل کرسکتے ہیں سیاحت کیلئے ٹھوس اقدامات کی ضرورت ہے

 

 اس موقع پر ڈپٹی سپیکرمحمودجان نے سوال کیاکہ ہمالیہ ہائوس سے کوئی آمدنی نہیں ہورہی ہے بلکہ سرکاری افسران اس کو ذاتی طو رپر استعمال کررہے ہیں

 

 وزیرخزانہ تیمورسلیم جھگڑا نے کہاکہ پچھلے چارسالو ں میں سیاحت کی مد میں ریونیوچارگنابڑھی ہے ریونیواتھارٹی کو ہاسپیٹیلٹی مد میں گزشتہ مالی سال کے دوران650 ملین اکٹھے ہوئے اس سال ایک ارب سے زائد ہوگاجبکہ 2016میں یہ 150ملین نظرآرہاتھابیس سے تیس لاکھ لوگ جب سیاحتی مقامات پر آتے ہیں ظاہرہے اس سے خاطرخواہ ریونیوجنریٹ ہوتی ہے۔