دنیا بھر میں خسرہ کے مریضوں کی تعداد23برس کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی

اسلام آباد ( آن لائن )دنیا بھر میں خسرہ کے مریضوں کی تعداد 23برس کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی جب کہ طبی ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ بیشتر ممالک کورونا وائرس کی عالمی وبا کی وجہ سے بہت کم لوگوں کو حفاظتی ویکسین لگا رہے ہیں۔

عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او)کے مطابق گزشتہ برس دنیا بھر میں خسرہ کے8لاکھ 69ہزار 770 کیسز رپورٹ ہوئے جبکہ اس مرض سے ہونے والی اموات میں بھی 2016 کے مقابلے50فیصد اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔

عالمی ادارہ صحت کے مطابق حالیہ برسوں کے دوران خسرہ کا پہلا انجیکشن لگنے کی شرح جمود کا شکار رہی اور عالمی وبا کے دوران قطرے پلانے کی شرح میں کمی نے 9 کروڑ40 لاکھ لوگوں کی صحت کو خطرے میں ڈال دیا۔

عالمی ادارہ صحت خسرہ کے حوالے سے ٹیکنیکل افسر پروفیسر نتاشہ کروکرافٹ کا کہنا ہے کہ ہوا کے ذریعے پھیلنے والی اس بیماری سے گزشتہ برس 2 لاکھ 7 ہزار 5 سو اموات ریکارڈ کی گئی جب کہ کانگو ،مداگاسکر ،جارجیا ،قازقستان اور یوکرین سمیت9 ممالک میں خسرہ کے مجموعی کیسز کی 73فیصد شرح پائی جاتی ہے۔

صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے موجودہ صورتحال کو اس چنگاری کی مانند قرار دیا جو کہ جنگل میں آگ کا باعث بند سکتی ہے۔گاوی ویکسین گروپ کے سربراہ سیٹھ برکلیکا کہنا ہے کہ خسرہ کی بیماری مکمل طور پر قابل علاج ہے ایک ایسے وقت میں جب ہمارے پاس ایک محفوظ، موثر اور کم قیمت والی ویکسین موجود ہے ایسے میں کسی بھی شخص کو اس بیماری سے نہیں مرنا چاہیے۔تاہم یہ بات اہم ہے کہ رواں برس خسرہ اور دیگر متعدی بیماروں میں کمی ہوئی ہے جس کی وجہ کورونا وائرس کے خلاف اپنائی جانے والی احتیاطی تدابیر ہیں کیونکہ ان سے دیگر وائرسز کے پھیلا میں بھی کمی واقع ہوئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

یونیسف کا غریب ممالک کو کورونا ویکسین فراہم کرنے کا اعلان

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے اطفال یونیسف نے غریب ممالک کو کورونا ویکسین فراہم کرنےکا …