اردن حکومت کا تختہ الٹنے کی کوشش ناکام بنا دی گئی

عمان (این این آئی)اردن میں بادشاہ پر تنقید کرنیوالوں کیخلاف بڑا کریک ڈاؤن کیا گیا۔ بادشاہ عبداللہ کے سوتیلے بھائی شہزادہ حمزہ بن حسین کو محل میں نظر بند کردیا گیا۔اردن کے سابق ولی عہد نے اپنے سوتیلے بھائی اور ملک کے بادشاہ پر کرپشن، نااہل ہونے اور لوگوں کو ہراساں کرنے کا الزام لگایا تھا۔

حکومت کی جانب سے شہزادہ حمزہ کو گرفتار کرنے کی بھی تردید کی گئی تھی۔کریک ڈاؤن شہزادہ حمزہ کی جانب سے قبائل سے ملاقات کے بعد شروع کیا گیا، سابق وزیر مالیات بھی گرفتار افراد میں شامل ہیں۔اردن میں حکومت کا تختہ الٹنے کی مبینہ ناکام کوشش کے بعد امریکا نے اردنی فرمانروا شاہ عبداللہ کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا ہے۔

امریکی محکمہ خارجہ نے کہا ہے کہ اردن کے شاہ عبد اللہ امریکا کے ایک اہم پارٹنر ہیں۔ امریکا ان کی بھرپور حمایت کرتا ہے۔ امریکی وزارت خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس نے کہا کہ ہم ان اطلاعات کو باریک بینی سے دیکھ رہے ہیں جن میں اردن میں حکومت کا تختہ الٹنے کی طرف اشارہ کیا گیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ واشنگٹن عمان کے ساتھ رابطے میں ہے اور ہم اردنی حکام کے ساتھ بات چیت کررہے ہیں۔ شاہ عبداللہ امریکا کے ایک اہم اتحادی ہیں اور انہیں ہماری پوری حمایت حاصل ہے۔ سعودی عرب کی رائل کورٹ نے اردن کے شاہ عبداللہ کی مکمل حمایت کا اعلان کیا ہے۔ سعودی پریس ایجنسی کے مطابق سعودی رائل کورٹ نے کہا ہے کہ اردن میں ’امن اور استحکام کو برقرار رکھنے کے لیے شاہ عبداللہ اور شہزادہ الحسین بن عبداللہ ثانی کی جانب سے کیے گئے فیصلوں اور اٹھائے گئے اقدامات کی مملکت مکمل تائید و حمایت کرتی ہے۔

خیال رہے کہ ہفتے کے روز اردن میں سابق ولی عہد اور موجودہ فرمانروا کے سوتیلے بھائی کو حکومت کا تختہ الٹنے کی کوشش کے الزام میں ان کے محل میں نظر بند کیا گیا۔ اردن میں حکام نے سابق ولی عہد شہزادہ حمزہ کو حکومت کا تختہ الٹنے کی سازش کے الزام میں ان کے محل میں نظربند کردیا ہے اور شاہی دیوان کے سابق سربراہ باسم عوض اللہ سمیت بیس افراد کو گرفتارکر لیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں

افغان صدر کی تین مراحل پر مشتمل امن روڈ میپ کی تجویز

کابل(این این آئی) ترکی میں منعقد ہونے والے ایک اجلاس کے دوران افغان صدر اشرف …