افغانستان کے صوبہ لوگر میں کار بم دھماکہ، 30افراد جاں بحق

کابل (ویب ڈیسک) افغانستان کے صوبہ لوگر کے مرکزی پل علم شہر میں افطاری کے وقت کار بم دھماکہ ہوا جس میں تقریباً 30افراد جاں بحق اور 60زخمی ہوگئے۔

مقامی افراد کا کہنا ہے کہ دھماکے میںجاں بحق اور زخمیوں میںزیادہ تر تعداد ان طالب علموں کی ہے جو ضلع عذرسے کانکور ٹیسٹ کیلئے آئے تھے۔ طالب علموں کے علاوہ دھماکے میں جاں بحق ہونے والوں میں سرکاری افراد اور عوام کی بڑی تعداد بھی شامل ہے۔

دھماکہ سے مرکزی ہسپتال اور مقامی افراد کے گھروں کو بھی شدید نقصان پہنچا۔پولیس نے زخمیوں اور لاشوں کو ہسپتال منتقل کر دیا۔تاحال کسی نے بھی دھماکہ کی ذمہ داری قبول نہیں کی، جبکہ افغان صدارتی محل سے جاری بیان میں طالبان کو دھماکہ کا ذمہ دار قرار دیا گیا ہے

عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی صدر اسفندیار ولی خان نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹویٹر پر دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ رمضان المبارک کے مہینے میں بھی انسانیت کے دشمن دھماکے کررہے ہیں۔ اس عمل کا جتنا بھی مذمت کی جائے، کم ہے۔اسی طرح دھماکے کرنے والے انسانیت کے دامن پر کالا دھبہ ہے

جبکہ عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان نے بھی ٹویٹر پر اس دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ انسانیت اور پشتونوں کے دشمن رمضان المبارک کے مہینے بھی قتل و غارت سے باز نہیں ائیے، صوبہ لوگر میں افطاری کے وقت کار بم دھماکے میں 30 افراد کا قتل انسانیت اور اسلام کےخلاف عمل ہے۔ ہم اس کی بھرپور مذمت کرتے ہیں

یہ بھی پڑھیں

نوازشریف کی جائیدادیں20مئی کو نیلام کرنےکافیصلہ

ڈپٹی کمشنر(ڈی سی)شیخوپورہ نے سابق وزیراعظم نوازشریف کی ضبط شدہ جائیداد کی نیلامی کیلئے تاریخ …