براڈ شیٹ معاملے پر چیئرمین نیب قائمہ کمیٹی اطلاعات میں طلب

اسلام آباد: قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے اطلاعات نے براڈ شیٹ کے معاملے پر چیئرمین نیب جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال کو آئندہ اجلاس میں طلب کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے اطلاعات کا اجلاس چیئرمین جاوید لطیف کی زیرصدارت ہوا جس میں براڈ شیٹ کے معاملے پر گرما گرم بحث کی گئی۔
قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی اطلاعات نے براڈ شیٹ کے معاملے پر چیئرمین نیب کو آئندہ اجلاس میں طلب کیا ہے۔

چیئرمین کمیٹی جاوید لطیف کا کہنا تھاکہ چیئرمین نیب آئندہ اجلاس میں پیش ہوکر براڈ شیٹ کیس پر تفصیلی بریفنگ دیں، آکر بتائیں کہ براڈ شیٹ کو پیسہ کیوں اور کیسے دیا گیا؟ ادارےکی غلطی کے باعث عوام کے ٹیکس سے اربوں روپے کیوں ادا کیے گئے؟

چیئرمین کمیٹی نےمزید کہا کہ نیب ایک ریاستی ادارہ ہے، اس سے مراد ہرگز صرف چیئرمین نہیں، ہم یہ دیکھنا چاہتے ہیں قوم کے پیسے غلط طریقے سے کیوں دیے گئے؟ جو ادائیگی کی گئی وہ پیسے بغیر کسی تصدیق کے غلط اکاؤنٹ میں بھیج دیے گئے۔

کمیٹی کے رکن ناصر خان نے مطالبہ کیاکہ پرانے چیئرمین سے بھی پوچھا جائے کہ ایسا کیوں ہوا؟
ذرائع کا کہنا ہے کہ چیئرمین کمیٹی اور وزیر اطلاعات کے درمیان نوک جھونک ہوئی۔ شبلی فرازنےکہا اگر چیئرمین کو بلانا ہے تو باقی کرداروں کو بھی بلائیں، کل کوئی کمیٹی سابق وزیراعظم کو بھی بلا سکتی ہے۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیراطلاعات کا کہنا تھا کہ اپوزیشن کا مقصد ہر پلیٹ فارم کا غلط استعمال کرکے نیب کو دباؤمیں لانا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ اطلاعات کمیٹی میں چیئرمین نیب کو بلانے کی بات مضحکہ خیز ہے۔ وزیراعظم عمران خان نے انکوائری کمیٹی بنا دی ہے جو 45روزمیں جواب دے گی۔

شبلی فراز نے کہا کہ ہم براڈ شیٹ کی مکمل انکوائری چاہتے ہیں۔ انکوائری کمیٹی کا نوٹیفکیشن آج یا کل جاری ہو جائے گا۔

قبل ازیں قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے خارجہ امور نے بھی براڈ شیٹ کے امور پر بریفنگ کے لیے چیئرمین نیب کو طلب کیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں

حکومت کی تمام اتحادی جماعتوں کا حفیظ شیخ کی حمایت کا اعلان

اسلام آباد:سینیٹ انتخابات میں حکومت کی تمام اتحادی جماعتوں نے حکومتی امیدوارحفیظ شیخ کی حمایت …