فارن فنڈنگ کیس، پی ڈی ایم کا روزانہ کی بنیاد پر سماعت کا مطالبہ

ادارے تحقیقات کریں تو عمران خان کا فالودہ ،خانسامہ اورمنیجر کروڑ پتی نکلیں گے‘احسن اقبال‘پرویز اشرف و دیگر کی گفتگو

اسلام آباد (این این آئی)اپوزیشن اتحاد پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) نے الیکشن کمیشن آف پاکستان میں زیر سماعت فارن فنڈنگ کیس کا فیصلہ جلد کرنے کیلئے یاداشت پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ ادارے پی ٹی آئی کے فارن فنڈنگ کیس کی تحقیقات کریں تو عمران خان کا بھی فالودہ والا نکلے گا،خانسامہ ،منیجر کروڑ پتی نکلیں گے،پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس پاکستان کی سیاسی تاریخ کا سب سے بڑا سکینڈل ہے، سب سے رسیدیں مانگنے والے کی جب اپنی رسیدیں دینے کی باری آئی تو مسلسل التواء کے ہتھکنڈے استعمال کررہا ہے،فارن فنڈنگ کیس کی میرٹ ،شفاف انداز میں تحقیقات سے الیکشن کمیشن کی کھوئی ساکھ بحال ہوسکتی ہے۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان کے باہر سابق وزیراعظم راجہ پرویز اشرف اور پی ڈی ایم میں شامل دیگر جماعتوں کے رہنماؤں کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے پاکستان مسلم لیگ (ن) کےاحسن رہنماء اقبال نے کہا کہ آج پی ڈی ایم کا وفد چیف الیکشن کمشنر سے ملا اورعلامتی مظاہرہ کیا کیونکہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کا فارن فنڈنگ کیس 6 سال سے التوا کا شکار ہے۔

انہوں نے کہا کہ فارن فنڈنگ کیس میں الیکشن کمیشن خود قرار دے چکا ہے کہ پی ٹی آئی نے قانون کا غلط استعمال کرکے اس پورے عمل کو التوا میں ڈالنے کی کوشش کی ہے۔انہوں نے کہا کہ کبھی وہ درخواست کرتے ہیں کہ اس کارروائی کو خفیہ رکھا جائے، کبھی درخواست دیتے ہیں کہ الیکشن کمیشن کا دائرہ اختیار نہیں ہے لیکن یہ تمام قانونی مسائل حل ہوچکے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مارچ 2018 میں جو سکروٹنی کمیٹی بنائی گئی تھی اس کا مینڈیٹ ایک ماہ تھا کہ وہ ایک ماہ میں پی ٹی آئی کے فنڈز کی اسکروٹنی کرکے رپورٹ پیش کرنی تھی لیکن تاحال عمل مکمل نہیں ہوسکا۔

انہوں نے کہا کہ 20 نومبر 2019 کو اپوزیشن کا نمائندہ وفد چیف الیکشن کمشنر کے پاس آیا تھا اور درخواست کیا تھا کہ اس معاملے کو جلد از جلد نمٹاجائے اور روزانہ کی بنیاد پر سماعت کرکے اس مسئلے کا فیصلہ کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ یہ پاکستان کی سیاسی تاریخ کا سب سے بڑا سکینڈل ہے، ایک سیاسی جماعت نے ممنوعہ ذرائع سے نہ صرف فنڈنگ حاصل کی بلکہ منی لانڈرنگ کی، امریکا کے اندر امریکا کے قوانین کی خلاف ورزی کی۔ انہوں نے کہا کہ وہ جماعت اعتراف جرم کر چکی ہے، کہا جارہا ہے ایجنٹس نے گڑ بڑ کی جبکہ پاکستان کا قانون واضح طور پر کہتا ہے کہ جو بھی ایجنٹ مقرر ہوگا، پرنسپل اس کا ذمہ دار ہوگا اور ایجنٹس عمران خان نے خود مقرر کیے۔

انہوں نے کہا کہ آج ہم نے یاد داشت میں کہا ہے کہ پی ٹی آئی کے فارن فنڈنگ کیس کے تمام ثبوت آچکے ہیں جو ان کے اپنے بانی رکن کی طرف سے دائر درخواست ہے، اس پر فوری فیصلہ کیا جائے تا کہ انصاف پر مبنی سلسلہ شروع ہو اور ہم امید کریں تاکہ اگلے انتخابات بھی شفاف ہوں۔انہوں نے کہا کہ پی پی پی کی طرف سے واشگاف الفاظ میں یہ بات ریکارڈ میں لانا چاہتا ہوں اور عوام کو بتانا چاہتا ہوں کہ ہماری کوئی غیر قانونی فارن فنڈنگ نہیں ہے اور جب الیکشن کمیشن کہے گا ہم ریکارڈ دینے کو تیار ہیں۔ دوسری جانب پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس میں درخواست گزار اکبر ایس بابر نے الیکشن کمیشن کی سکروٹنی کمیٹی پر عدم اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ کمیٹی ناکام ہوچکی ہے، جو سکروٹنی ہو رہی ہے وہ بالکل شفاف نہیں ہے،تمام ریکارڈ الیکشن کمیشن کے حوالے کیا جائے ،سب کے سامنے سماعت کی جائے۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی ممنوعہ فنڈنگ کے حوالے سے ہم نے دستاویزات ویب سائٹ سے حاصل کرکے کمیٹی کو دیں، سکروٹنی کمیٹی نے یہ دستاویزات خودویب سائٹ سے ڈاؤن لوڈکرکے پی ٹی آئی کو بھی فراہم کیں، ہم نے سکروٹنی کمیٹی سے کہاکہ آپ ان دستاویزات کوتسلیم کرتے ہیں یانہیں،آپ نے آج فیصلہ سنانا تھا، الیکشن کمیشن نے سکروٹنی کمیٹی کو ذمہ داری دی تھی کہ دستاویزات کی تصدیق کریں یا تردید کریں۔اکبر ایس بابر نے کہا کہ سکروٹنی کمیٹی نے کہا ہم دستاویزات کی تصدیق سے متعلق فیصلہ نہیں دیں گے، ہماری درخواست الیکشن کمیشن کے سامنے موجود ہے کہ الیکشن کمیشن ریکارڈ منگواکر فیصلہ کرے۔

یہ بھی پڑھیں

جماعت اسلامی کا سینیٹ انتخابات میں حکومت کی حمایت سے انکار

جماعت اسلامی نے سینیٹ انتخابات میں حکومت کی حمایت اور تعاون سے انکار کردیا۔ پاکستان …