صدارتی ریفرنس نظر ثانی کیس کی سماعت، جسٹس فائز نے خود دلائل دیئے

میرے اور اہلخانہ کی تضحیک کی گئی ،عدالتی کارروائی براہ راست کی جائے تاکہ عوامی رائے کو درست کیا جائے،جسٹس فائزعیسیٰ

اسلام آباد (آن لائن) سپریم کورٹ نے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے خلاف صدارتی ریفرنس کیس کے فیصلے کے خلاف نظرثانی درخواستوں کی سماعت کے موقع پر درخواست گزار جسٹس قاضی فائز عیسیٰ سے دلائل طلب کر لئے ۔ پیر کے روز جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں دس رکنی فل کورٹ بنچ نے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ صدارتی ریفرنس نظرثانی کیس کی سماعت کی۔

سماعت کا آغاز ہوا تو جسٹس قاضی فائز عیسیٰ اور انکی اہلیہ کمرہ عدالت میں موجود تھے۔ معاون وکیل نے عدالت کو بتایا کہ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے وکیل منیر اے ملک کی طبیعت ناساز ہے، وہ نہیں آ سکے، اسی دوران جسٹس قاضی فائز روسٹرم پر آگئے،جس پر جسٹس عمر عطا بندیال نے پوچھا کیا آپ خود دلائل دیں گے، جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا میں خود دلائل دونگا، ہم 2019سے مشکل میں مبتلا ہیں، میں نہیں چاہتا کہ کوئی اور ساتھی جج کیس کے خاتمے تک بنچ سے ریٹائر ہو جائے، کہیں ایسا نہ ہو نظرثانی کیس مکمل ہونے سے قبل پھر کوئی معزز جج ریٹائر ہو جائے۔

جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ ہم وفاق کا موقف سن لیتے ہیں۔ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ میں ایک متفرق درخواست بھی دائر کر رکھی ہے،میری درخواست غیر معمولی ہے، سپریم کورٹ میری درخواست پر غور کرے، میں نے سپریم کورٹ سے استدعا کی ہے نظرثانی کیس کی براہ راست نشریات نشر کی جائیں، میں نے درخواست میں استدعا کی ہے نظر ثانی کیس پی ٹی وی اور پرائیویٹ چینلز پر براہ راست نشر کیا جائے، میرے اور میرے اہل خانہ کیخلاف تضحیک آمیز مہم چلائی گئی، ہمارا عدالتی کارروائی براہ راست نشر کرنے کی درخواست کا مقصد عوامی رائے کو درست کرنا ہے، مجھے علم نہیں حکومت کا میری درخواست پر کیا موقف ہوگا

جسٹس عمر عطا بندیال نے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ سے مکالمے میں کہا آپ کی درخواست کی اس سے پہلے کوئی مثال نہیں ملتی، آپ کی شکایت ہے کہ آپ کی آپکے اہل خانہ کی تضحیک کی گئی،ہمارے سامنے آپ کی اور آپ کے اہل خانہ کی تضحیک سے متعلق کوئی مواد موجود نہیں ہے،اگر آپ کی درخواست منظور ہوئی تو پھر ہر ہر سائل براہ راست نشریات کیلئے سپریم کورٹ آجائے گا، اگر آپ چاہیں تو دلائل دینا چاہیں تو دے دیں، ہم ابھی آپ کی درخواست پر حکومت کو نوٹس جاری نہیں کریں گے۔ کیس کی سماعت آج دن ساڑھے گیارہ بجے تک ملتوی کردی گئی۔

یہ بھی پڑھیں

کوروناوائرس سے مسلسل چوتھے روز 5 ہزار سے زائد افراد متاثر، 114 انتقال کر گئے

متعدد اقدامات کے باوجود پاکستان میں عالمی وبا کورونا وائرس کی تیسری لہر کا پھیلاؤ …