جسٹس فائز عیسیٰ کیس‘سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد صدر کو استعفیٰ دینا چاہئے‘سکندر شیرپاو

بنوں ( نمائندہ شہباز) قومی وطن پارٹی کے صوبائی چیئرمین سکندر خان شیرپاو نے کہا ہے کہ مہنگائی نے غریب عوام کی چیخیں نکلوا دی ہیں لیکن جعلی وزیراعظم کو ابھی تک پتہ بھی نہیں جو ایک انٹرویو میں خود اعترا ف کر چکے ہیں کہ مجھے غلط اعداد و شمار دیا گیا لیکن یہ اعداد و شمار دینے والے اُن کی اپنی ہی ٹیم کے لوگ ہیں چینی اور آٹا رپورٹ میں عمران خان کے اپنے ہی ساتھی ملوث نکلے اُن کے خلاف کوئی کارروائی نہیں ہوئی ، ریاست مدینہ کے بنیاد رکھنے کا دعویٰ تو کیا جا رہا ہے لیکن ریاست مدینہ میں ایسا نہیں ہو تا کہ حاکم رعایا کے حال احوال سے بے خبر ہو‘ ریاست مدینہ کے دعویداروں کی حکومت میں 14 ہزار ارب روپے کا قرضہ لیا گیا ، کہاں اور کیسے خرچ ہوئے عوام کے معیار زندگی میں تو کوئی تبدیلی نہیں آ ئی وزیر اعظم قوم کو اس کا حساب دیں۔

گزشتہ روز سپریم کورٹ کا جسٹس فائز عیسیٰ سے متعلق فیصلہ آ یا سپریم کورٹ کہتی ہے کہ بد نیتی صدرپاکستان نے کی ہے صدر نے کسی سے رائے نہیں لی اب صدر کو کوئی جواز ہی نہیں کہ وہ اس کرسی پر بیٹھے بلکہ استعفیٰ دیں کیونکہ اُنہوں نے آئین و قانون سے انخراف کیا ہے ۔

اُنہوں نے کہا کہ پچیس جولائی 2018 ء کے انتخابات میں منظم منصوبہ بندی کے تحت سیلیکشن کی گئی اور موجودہ وزیراعظم عمران خان کیلئے سارا کھیل کھیلا گیا ڈھائی سال گزرنے کے باوجود عوام کی مشکلات بڑھ رہی ہیں اور حل ہونے کا نام نہیں لے رہیں یہ یہی وجہ ہے مسائل و مشکلات کا حل وہ لوگ کر سکتے ہیں جن کی جڑی عوام میں پھیلی ہوئی ہوں پیرا شوٹ کے ذریعے آ ئے ہوئے ممبران اسمبلی سے توقع نہیں کی جا سکتی وہ قومی وطن پارٹی کی آٹھویں یوم تاسیس کے سلسلے میں بنوں آڈیٹوریم ہال میں منعقدہ ایک بڑے جلسہ سے خطاب کر رہے تھے جس سے سابق ایم پی اے صوبائی وائس چیئرمین عدنان خان وزیر ، ضلعی چیئرمین ملک شاہ کرام خان وزیر اور دیگر مشران نے بھی خطاب کیا۔

اس موقع پر کرک کے ضلعی چیئرمین غفران خٹک ، ڈیرہ اسماعیل خان کے ضلعی چیئرمین دمساز گنڈاپور ، جنوبی وزیرستان وانا کے چیئرمین التامیر خان بھی موجود تھے ملک میں پشتونوں کے ساتھ رواں رکھے جانے والے سلوک پر سکندر خان شیرپاؤ نے کہا کہ پشتون اسی انتظار میں ہیں کہ کون ہمارے حقوق کیلئے آواز اُٹھائے گا لیکن جب کوئی نہیں اُٹھائے تو قومی وطن پارٹی ضرور آواز اُٹھائے گی دہشت گردی کے خلاف پشتونوں نے قربانیاں دی ہیں ، الٹا بد قسمتی سے دہشت گردی کو پشتونوں کے ساتھ جڑا جاتا ہے ، اسلام آ باد میں بیٹھے پالیسی سازوں کو دہشت گردی کے خلاف جنگ کے نام پر جو فوائد ملے اس میں پشتونوں کو حصہ نہیں دیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں

PDM Nowshera protest

عمرانی کورونا کو ایک پل بھی ماننے کو تیار نہیں، میاں افتخار حسین

نوشہرہ : عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی جنرل سیکرٹری و پاکستان ڈیوکریٹک موومنٹ (پی ڈی …