ایم ٹی آئی آرڈیننس،نجکاری کے ذریعے اپنوں کو نوازا جارہا ہے، میاں افتخار

نوکریاں دینے والوں نے پاکستان سٹیل ملز میں 4500، ریلوے میں 6000افراد کو بے روزگار کیا، مرکزی سیکرٹری جنرل اے این پی

اسلام آباد(نمائندہ خصوصی) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی سیکرٹری جنرل و ترجمان پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) میاں افتخارحسین نے کہا ہے کہ ایم ٹی آئی آرڈیننس کے ذریعے ہسپتالوں کی نجکاری کی جارہی ہے اور اسی راستے حکومت اپنوں، دوستوں اور رشتہ داروں کو نوازنے کی کوشش کررہا ہے۔

اسلام آباد کے پمز ہسپتال میں گرینڈ ہیلتھ الائنس کے احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے میاں افتخارحسین نے کہا کہ پمز ہسپتال بارے ایم ٹی آئی آرڈیننس کی مذمت کرتے ہیں، ہر فورم پر حمایت جاری رکھیں گے۔خیبرپختونخوا میں ایم ٹی آئی ایکٹ کے خلاف احتجاج کرنیوالوں پر لاٹھی چارج کی گئی۔ایم ٹی آئی ایکٹ کے خلاف خیبرپختونخوا میں بھی آواز اٹھائی اور اس ظلم کے خلاف آواز اٹھاتے رہیں گے۔پشاور کے ہسپتالوں کا سربراہ وہ شخص بنایا گیا جو پاکستان میں رہتا ہی نہیں۔علاج میں عوام کو جو ریلیف مل رہا تھا، موجود ہ حکومت نے وہ بھی ختم کردیا ہے۔

ترجمان پی ڈی ایم کا کہنا تھا کہ فلاحی ریاست بنانے والوں کی حکومت میں غریب کا علاج کروانا ممکن نہیں۔نوکریاں دینے والوں نے پاکستان سٹیل ملز میں 4500، ریلوے میں 6000افراد کو بے روزگار کیا۔خیبرپختونخوا کے بعد اسلام آباد کے ہسپتالوں پر تجربے کئے جارہے ہیں، اب یہ ہسپتال بھی تباہ کرنا چاہتے ہیں۔کرونا وبا کے دوران ایل آر ایچ گیا تو نظام تباہ ہوتا ہوا خود دیکھا، برکی نے پورا نظام صحت تباہ کیا۔میاں افتخارحسین نے کہا کہ عمران خان اپوزیشن میں تھے تو 126دن دھرنا دیا، آج ڈاکٹرز کو احتجاج نہیں کرنے دیا جارہا۔

آئی ایم ایف کے شرائط کے مطابق عوام کا خون چوسا جارہا ہے، ہر شعبہ اس وقت حالت احتجاج میں ہے۔ایسا ماحول بنایا گیا کہ جو حکومت کی پالیسی ہے اسی کے ساتھ چلے، وگرنہ ملک نہیں چلے گا۔ اے این پی اور پی ڈی ایم ڈاکٹرز برادری کے ساتھ کھڑی ہے اور انکے مطالبات کیلئے ہمیشہ کھڑی رہے گی۔

یہ بھی پڑھیں

اے این پی کا دہشتگردی کے خلاف جنگ کی تحقیقات کیلئے ٹرتھ کمیشن کا مطالبہ

پشاور:عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی سینئر نائب صدر امیر حیدر خان ہوتی نے کہا ہے …