بٹ خیلہ میں پی ڈی ایم کے زیراہتمام جلسہ کل ہوگا، ڈیرہ مرادجمالی میں موجودہ حکومت کیخلاف احتجاجی ریلی

موجودہ حکومت باقی رہی تو مہنگائی مزید بڑھے گی، سلیکٹڈ حکومت کا تختہ دار الٹنے کیلئے پی ڈی ایم جلسہ سنگ میل ثابت ہوگا، ناکام حکومت ملک چلانے کے قابل نہیں، سیف اللہ خان

بٹ خیلہ / ڈیرہ مرادجمالی (نمائندہ شہباز+ آن لائن) ظفر پارک بٹ خیلہ میں پی ڈی ایم کے زیر اہتمام 11جنوری کو ہونے والے جلسہ عام کیلئے بھر پور تیاریاں زور وشور سے جاری ہے۔ جلسہ عام میں بھر پور شرکت کو یقینی بنائیں گے۔ پاکستان پیپلز پارٹی موجودہ سلیکٹڈ حکومت کے خاتمے کیلئے میدان عمل میں ہے۔ عوام کو جھوٹے وعدوں پر ورغلا یا گیا، ناکام حکومت ملک چلانے کے قابل نہیں۔ اگر موجودہ حکومت باقی رہی تو مہنگائی مزید بڑھے گی۔

پیپلز پارٹی کے ضلعی صدر سیف اللہ خان کا اجلاس سے خطاب، تفصیلات کیمطابق 11جنوری کو ظفر پارک بٹ خیلہ میں پی ڈی ایم جلسہ کیلئے ڈگر میں اکبر علی کے رہائیشگاہ پر ایک اجلاس منعقد ہوا۔جس میں ضلعی عہدیداروں اور کارکنان نے شرکت کی۔اس موقع پر فیصلہ کیا گیا کہ 11جنوری کو باباسیرئی کے مقام پر پیپلز پارٹی کے کارکنان صبح نو بجے جمع ہوکر قافلہ شکل میں پی ڈی ایم جلسہ بٹ خیلہ میں بھر پور شرکت کریں گے۔

اجلاس کے بعد ضلعی ترجمان محمد علی خان ایڈوکیٹ،اکبر علی اور سید حضرت نے میڈیا کو بتایا کہ موجودہ حکومت سلیکٹڈ ہے عمران خان نے لوگوں کو سبز باغ دکھائے اور ابھی تک عوام کی فلاح کیلئے کچھ بھی نہیں کیا۔ موجودہ حکومت کا جانا اب ضروری ہوچکا ہے۔سلیکٹیڈ حکومت کا تختہ دار الٹنے کیلئے پی ڈی ایم جلسہ سنگ میل ثابت ہوگا۔

اس موقع پر انہوں نے کوئٹہ میں ہزارہ برادری کی جانب سے احتجاج قابل افسوس ہے۔پی ڈ ی ایم کی مرکزی کال پر ڈیرہ مرادجمالی میں موجودہ حکومت کے خلاف احتجاجی ریلی اور جلسہ منعقد کیا گیا۔ ریلی اور جلسے میں پی ڈی ایم میں شامل جماعتوں کے کارکنان نے بڑی تعداد میں شرکت کی۔

جلسے کے شرکاء سے پی پی پی صوبائی صدر میرعلی مددجتک، جمعیت علماء اسلام بلوچستان کے صوبائی امیر مولاناعبدالواسع، پی پی پی کے سینڑل کمیٹی کے رکن سابق صوبائی صدر میر محمد صادق عمرانی، بی این پی مینگل کے مرکزی رہنما رکن اسمبلی ملک نصیرشاہوانی، پشتونخواہ رہنماعبدالرحیم زیارتوال، مسلم لیگ ن صوبائی صدرجمال شاہ کاکڑ، سابق سینٹرحاجی محمدعثمان بادینی،نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر عبدالخالق بلوچ،جمعیت علماء پاکستان شاہ اویس نورانی گروپ کے صوبائی صدر مولانا عباس قادری ، جمعیت علماء اسلام کے صوبائی جنرل سیکرٹری آغامحمودشاہ ، جمعیت علماء پاکستان بلوچستان کے صوبائی جنرل سیکرٹری مولانا عبدالحکیم انقلابی اور دیگر نے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ بلوچستان کے حالات کو خراب کیا جارہا ہے تبدیلی کے دعویدار حکمران بلوچستان کے عوام کو لاشوں کے تحفے دے رہا ہے۔ 2021 کے ابتدا بدامنی سے کر دی گئی جو امن کے دعویداروں کے لیے سوالیہ نشان ہے۔

اربوں کھربوں کے بجٹ قیام آمن پر خرچ ہورہا ہے، موجودہ جلسہ جعلی حکمرانوں کے منہ پرطمانچہ ہے انہوں نے کہاکہ حکمران چینی، آٹا، سیمنٹ چور ہیں، ہم نااہلوں کا تختہ الٹنے کے لیے عوام کے پاس آئے ہیں، انہوںنے کہاکہ ہمارے کردار میں کبھی جھول نہیں آیاہم نہ جھکے اور نہ ہی بکے ہیں ہم انصاف کا بول بالا چاہتے ہیں۔ موجودہ حکمرانوں سے انصاف نہیں ہوگا یہ جعلی ہیںملک میں مہنگائی عروج پر ہے عوام کی زندگیاں مشکل سے گذر رہی ہیں۔ وفاقی اور صوبائی حکومتوں کی غلط معاشی پالیسیوں کے سبب مہنگائی میں بے پناہ اضافہ ہوتا جارہا ہے۔ عوام سے روزگار دینے کے جھوٹے وعدے کرکے عوام سے ان کی روزی روٹی بھی چھین رہے ہیں اسٹیل مل کو بند کردیا گیا ہزاروں کارکنوں کو بے روزگاری کردیا گیا پاکستان ائیر لائن کو بند کرنے کی منصوبہ بندی کی جاری ہیں

انہوں نے کہاکہ 2018کے عام الیکشن میں بڑے پیمانے پر دھاندلی کرکے سیلکٹڈ افراد کو لاکر ایوانوں میں بٹھایاگیا جنھوں نے اپنے انٹریو میں بھی اعتراف کیا کہ مجھے کوئی بھی تجربہ نہیں ہے جس کی وجہ سے ہم مکمل طور پر فیل ہوچکے ہیں انہوں نے کہاکہ موجودہ سلیکٹڈ حکمرانوں نے اقتدار سے قبل پاکستان کو قرضوں سے فری کرانے کادعوی کیا تھامگر اقتدار میں آنے کے بعد تمام ریکارڈ توڑ کر بہت بڑے پیمانے پر قرضہ لیکر ملک کو دیوالیہ بنادیا ہے انہوں نے کہاکہ حکمرانوں کے دن گنے جاچکے ہیں اب انہیں گھر پہنچاکرہی دم لیں گے۔

یہ بھی پڑھیں

کشکول توڑنےکے دعوے، 2سال میں 5ارب ڈالرز، 4.5ٹریلین روپے قرضہ لیا گیا

2018 ء سے 2020 ء کے دوران حکومت نے قومی مالیاتی اداروں سے 4.5 ٹریلین …