پشتونوں کو دیوار سے لگانے کے اچھے نتائج برآمد نہیں ہونگے، مابت کاکا

چمن بارڈر کو پیدل آمدورفت اور چھوٹے کاروبار کیلئے کھو لا جائے، صوبائی جنرل سیکرٹری اے این پی

چمن(نمائندہ خصوصی)عوامی نیشنل پارٹی صوبہ بلوچستان کے جنرل سیکرٹری مابت کاکا اورصوبائی نائب صدر اصغر علی ترین نے کہا ہے کہ مشرقی بارڈر تھرپارکر پر معاشی سرگرمیاں جاری رکھنے کیلئے منتیں اور مغربی بارڈر چمن وطورخم پر سرد مہری سمجھ سے بالاتر ہے ،لوگوں پر روزگار کے دروازے بند کرنا دانشمندی نہیں پشتونوں کو دیوار سے لگانے کی کسی صورت اچھے نتائج برآمد نہیں ہوں گے لہٰذا دو وقت کی گزر بسر کرنے والے ہزاروں محنت کشوں غریب پرور عوام کے مصائب کو مدنظر رکھتے ہوئے چمن بارڈر کو پیدل آمدورفت اور چھوٹے کاروبار کیلئے کھولا جائے

ان خیالات کا اظہار انہوں نے چمن میں آل پارٹیز انجمن تاجران لغڑی اتحاد کے زیر اہتمام پاک افغان بارڈر کی بندش کے خلاف احتجاجی دھرنے سے خطاب کے دوران کیا انہوں نے کہا کہ حکمرانوں کی یہ پالیسی سمجھ سے بالاتر ہے کہ مشرقی بارڈر پر کاروبار آمد و رفت کیلئے منتیں اور مغربی بارڈر پر سردمہری اپنائے رکھا ہے اس طرح کے ناانصافیوں پر مبنی رویوں سے ہم ایک تلخ تجربے سے پہلے گزرے ہیں ان سے سبق حاصل کیا جائے

انہوں نے کہا کہ پاک افغان بارڈر کے زریعے روزانہ تیس ہزار افراد آتے جاتے تھے اور اپنے گھر کا چولہا جلائے رکھتے آج یہ ہزاروں محنت کش نان شبینہ کے محتاج ہیں جس سے بیروزگاری مزید پھیلے گی لہذا ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ جس طرح دوسرے شعبہ ہائے زندگی کیلئے احتیاطی تدابیر اور  ایس او پیز متعارف کروائے گئے اسی طرح پاک افغان بارڈر کیلئے بھی میکنزم بناکر اس اہم مسئلے کو فورآ حل کیا جائے

انہوں نے دھرنے کے  شرکا کو پرامن احتجاج ریکارڈ کرنے پر خراج تحسین پیش کیا دھرنے سے دیگر سیاسی جماعتوں انجمن تاجران اور لغڑی اتحاد کے نمائندوں نے بھی خطاب کیا۔

یہ بھی پڑھیں

ناقص پالیسیوں، معاشی بدحالی اور ناکام بجٹ کے خلاف اے این پی خواتین کااحتجاجی مظاہرہ

پی ٹی آئی کی وجہ سے ہر سیکٹر شدید ترین بحران کا شکار ہے،سلیکٹڈ حکمرانوں …