تمباکو کیلئے مقررہ نرخ کاشتکاروں کی ساتھ مذاق ہے، افضل خاموش

ملٹی نیشنل کمپنیاں مزدوروں کے استحصال میں مصروف ہیں، چیئرمین مزدور کسان پارٹی

چارسدہ(نمائندہ شہباز) چیئرمین مزدور کسان پارٹی افضل خاموش نے کہا ہے کہ ملٹی نیشنل کمپنیوں نے تمباکو کیلئے جو نرخ مقرر کیا ہے وہ کاشت کاروں کے ساتھ مزاق ہے ،زندگی کے دوسرے شعبوں کی طرح ملٹی نیشنل کمپنیاں بھی کسانوں اور مزدوروں کے استحصال میں کئی دہائیوں سے مصروف عمل ہیں۔

Advertisements

پارٹی کے سابق صوبائی صدر گل حیدر کے تعزیتی ریفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ دو بڑی ملٹی نیشنل کمپنیاں تمباکو کے کاشتکاروں اور خاص طور پر چھوٹے کاشتکاروں کا شدید استحصال کررہی ہیں جس میں پاکستان ٹوبیکو کمپنی اور لیکسن ٹوبیکو کمپنی سر فہرست ہے یہ کمپنیاں نہ صرف یہ کہ کھاد اور کیڑے مار ادویات مہنگے داموں کاشتکاروں کو بیچتی ہیں اور اگر کوئی کاشت کار نہ خریدے تو اسے دھمکی دی جاتی ہے کہ اس کی پیداوار نہیں خریدی جائے گی۔

فصل مکمل ہونے پر یہ کمپنیاں تمباکو کو مختلف گریڈ میں تقسیم کرتی ہیں اور اوّل و دوئم گریڈ کی تمباکو کو خرید کر کم درجے کی تمباکو نہیں خریدتیں، جس کے باعث کاشتکاروں کو ہر سال نقصان اُٹھانا پڑتا ہے۔ اگلے سال پھر کمپنیوں کے جھوٹے وعدوں پر کاشت کار یقین کرلیتے ہیں، کم آمدنی کے باعث ان کاشتکاروں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

اس سال ٹوبیکو بورڈ نے تمباکو کے فی کلو 212 نرخ مقرر کیا ہے جو کسانوں کے محنت کے اوپر مزاق ہے مرکزی سطح پر پاکستان ٹوبیکو بورڈ بناہوا ہے جس میں چند بڑے زمیندار کاشت کاروں کے نمائندوں کے طور پر شامل ہیں۔ حقیقی نمائندگی نہ ہونے کے باعث ان کی مشکلات میں اضافہ ہوتا جارہا ہے۔

انہوں نے مرکزی حکومت سے مطالبہ کیا کہ صوبائی ٹوبیکو بورڈ کی سطح پر حقیقی نمائندوں کو شامل کیا جائے۔ کاشت کاروں کے لیے سہولیات کا انتظام کیا جائے۔

یہ بھی پڑھیں

غیر قانونی اراضی کیس، نیب نے مریم نواز کو 11 اگست کو طلب کرلیا

لاہور: قومی احتساب بیورو(نیب) نے مسلم لیگ ن کین مرکزی نائب صدر مریم نواز کو11 …

%d bloggers like this: