حکومت کے ساتھ کسی قسم کے مذاکرات پر تیار نہیں، مولانا فضل الرحمان

ملتان: حکومت مخالف اتحاد پاکستان ڈیموکریٹک مومنٹ کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کا کہنا ہے کہ حکومت کے ساتھ کسی قسم کے مذاکرات کرنے پر تیار نہیں، 8 دسمبر کے اجلاس میں آئندہ کا لائحہ عمل طے کیا جائیگا۔

ملتان میں یوسف رضا گیلانی کے ہمراہ میڈیا سے بات کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ کامیاب جلسے پر یوسف رضا گیلانی کو مبارک باد پیش کرتا ہوں، یوسف رضا گیلانی کے بیٹے پولیس گردی کا نشانہ بنے، ہماری نظریں اب لاہور کے جلسے پر ہوں گی۔

انہوں نے بتایا کہ آئندہ کی حکمت عملی پی ڈی ایم کے 8 دسمبر کو ہونے والے سربراہی اجلاس میں طے ہوگی، اجلاس میں تمام زمینی حقائق پر غور کیا جائے گا، ہم اپنے شیڈول کے مطابق آگے بڑھ رہےہیں، رکاوٹیں بھی آگے آرہی ہیں۔


مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ ملتان کے عوام نے سلیکٹڈ کو مسترد کر دیا، ہم نے انھیں مات دے دی اور ان کے عزائم ناکام بنادیے، عوام کے معاملات سے حکومت لاتعلق ہوگئی ہے، حکومتی رٹ ختم ہو چکی ہے، ملک میں تمام معاملات سے کوئی لاتعلق ہے تو وہ عمران خان ہےحکومت کو عوام نظر نہیں آتے تو جلسہ کیا نظر آئے گا، ہم حکومت کے ساتھ کسی قسم کے مذاکرات کرنے پر تیار نہیں، مستقبل میں ضرورت پیش ہوئی تو پی ڈی ایم پلیٹ فارم پر فیصلہ کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ ہم فلسطین کی آزادی کی بات کریں، قبلہ اول بیت المقدس جس کا دارالحکومت ہو، آج اقوام متحدہ کے قانون کے خلاف وہاں سفارتخانہ کھولنے کا اعلان کر رہا ہے جو جبر اور زبردستی ہے لہٰذا سب سے پہلے بات فلسطین کی آزادی، خود مختاری اور دارالحکومت کی ہو گی

ایک سوال کے جواب میں مولانا فضل الرحمٰن نے کہا کہ حکومتی رٹ ختم ہو چکی ہے، اس وقت پاکستان میں اگر تمام معاملات میں کوئی غیرمتعلقہ ہے تو وہ عمران خان اور اس کی صوبائی حکومتیں ہیں، عوام کے معاملات اور حکومتی نظام سے ہی وہ تقریباً لاتعلق ہو گئے ہیں اور یہ پی ڈی ایم کی تحریک کا نتیجہ ہے کہ حکومت ایک غیرموثر چیز بن کر رہ گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے حکومت کے عزائم کو ناکام بناتے ہوئے مات اور شکست دے دی ہے، آپ نے دیکھا کہ قلعہ قاسم باغ کے میدان میں تل دھرنے کی جگہ نہیں تھی۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ ایک جدوجہد کا تسلسل ہے، ہم اپنے شیڈول کے مطابق بڑی کامیابی سے آگے بڑھ رہے ہیں، رکاوٹیں بھی سامنے آ رہی ہیں لیکن ہم سب چیز کی پرواہ کیے بغیر ہم قوم اور عام آدمی کی جنگ لڑ رہے ہیں۔

سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی نے کہا ہے کہ نامساعد حالات کے باوجود پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ نے ملتان میں کامیابی کے ساتھ جلسہ کیا اور جو کچھ اس حکومت کے وقت میں ہو رہا ہے اتنا تو ڈکٹیٹر شپ کے وقت میں بھی نہیں ہوا

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ(پی ڈی ایم) کا یہ نظام آگے بڑھتا رہے گا اور اب ہماری نظریں 13دسمبر کے لاہور کے جلسے پر ہوں گی، 8دسمبر کو اسلام آباد میں پی ڈی ایم کا سربراہی اجلاس ہو گا جس میں پی ڈی ایم میں شامل تمام جماعتوں کے سربراہان شریک ہوں گے اور آئندہ کی حکمت عملی میں طے ہو گی۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ جلسے سے قبل تقریباً ڈیڑھ ہزار کارکن جلسہ گاہ میں قلعہ کونا قاسم باغ میں پہنچ گئے تھے جہاں نہ پانی تھا، نہ بجلی، نہ انتظامات تھے لیکن ہم نے بجلی کے بغیر ہم نے جلسہ کیا اور ان تمام پکڑ دھکڑ کے باوجود جب سب لوگ یہاں آئے تو کچھ وزرا کے بیانات آنا شروع ہو گئے ہیں کہ یہ غلط فیصلہ ہوا حالانکہ یہ سب کچھ تو ایک ہفتے سے جاری تھا۔

انہوں نے کہا کہ ایک ہفتے سے پکڑ دھکڑ ہو رہی ہے، ابھی ہمارے لوگ جیلوں میں، 14سال کے بچوں کو بھی جیل میں ڈالا گیا ہے، اتنا تو ڈکٹیٹر شپ کے وقت میں نہیں ہوا جب یہ اب کر رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

حکومت کا 9سرکاری اداروں کی نجکاری کا فیصلہ

نجکاری کمیشن کی دستاویز کے مطابق ایس ایم ای بینک کی نجکاری اپریل ، فرسٹ …