حیات آباد اسپتال میں توڑ پھوڑ پراپوزیشن ارکان اسمبلی کیخلاف مقدمہ درج

پشاور: پشاور کے حیات آباد میڈیکل کمپلیکس میں توڑ پھوڑ اور ڈاکٹرز کو دھمکیاں دینے کے الزام پر رکن خیبرپختونخوا اسمبلی نگہت اورکزئی اور شفیق شیر آفریدی کے خلاف مقدمہ درج کر لیا گیا۔

تھانہ حیات آباد پولیس نے ایم پی اے نگہت اورکزئی اور شفیق شیر کے خلاف مقدمہ درج کیا جس میں نامعلوم افراد بھی نامزد کیے گئے ہیں۔ ایف آئی آر میں دونوں اراکین اسمبلی پر اسپتال میں توڑ پھوڑ، طبی عملے کو زدوکوب اور حراساں کرنے، اپنے ساتھ مسلح افراد لانے سمیت دیگر الزامات لگائے گئے ہیں۔

ایم پی اے نگہت اورکزئی اور شفیق شیر نے پولیس اہلکاروں کے ساتھ بھی ہاتھا پائی کی، اسپتال میں ایمبولینسز کا راستہ روکا اور ایمرجنسی میں انارکی پھیلائی۔

وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے حیات آباد میڈیکل کمپلیکس میں طبی عملہ کو یرغمال بناکر تشدد کا نشانہ بنانے اور توڑپھوڑ کا نوٹس لیا تھا۔ انہوں نے کہا تھا کہ ہسپتالوں میں اس طرح کے واقعات غیر قانونی اور ناقابل برداشت ہیں، کورونا کے خلاف فرنٹ لائن پر خدمات انجام دینے والے طبی اہلکار قوم کے ہیرو ہیں، ان کا احترام اور تحفظ سب سے مقدم ہے، ہسپتالوں میں طبی عملے کی تحفظ کو ہر صورت یقینی بنایا جائے گا۔

وزیرصحت تیمور سلیم جھگڑا نے بیان میں کہا ہے کہ باڑہ میں فائرنگ سے جاں بحق بچے کے بعد لواحقین کو طبی عملہ پر تشدد پر اکسانا اور اشتعال دلانا ناقابل برداشت ہے، اپوزیشن کے دو ایم پی ایز کے ایماء پر ہسپتال میں تشدد اور توڑپھوڑ افسوسناک ہے۔

یہ بھی پڑھیں

سلیم راز کی وفات سے پیدا ہونے والا خلاء کبھی پر نہیں ہوسگے گا، سردار حسین بابک

چارسدہ: عوامی نیشنل پارٹی خیبر پختونخوا کے جنرل سیکرٹری و ڈپٹی اپوزیشن لیڈر سردا ر …