کورونا وائرس،پشاور کی مویشی منڈیاں طبی رسک بن گئیں

بیوپاریوں اور خریداروں نے کورونا ایس او پیز کی دھجیاں اڑادیں

پشاور(سٹاف رپورٹر) پشاور کی مویشی منڈیاں طبی رسک بن گئی ہے ایس او پیز کی دھجیاں اڑائی جا رہی ہیں بیوپاری اور خریدار حفاظتی اقدامات پر عمل نہیں کر رہے ہیں جس کے باعث کورونا کے پھیلاؤ کامزید خطرہ پیدا ہو گیا ہے جبکہ جا نوروں کو کانگو وائرس اور دیگر بیماریوں سے بچنے کے لئے بھی حفاظتی اقدامات نہیں کئے جا رہے ہیں جی ٹی روڈ ، باڑہ روڈ ، پجگی روڈ ، پر چھوٹے بڑے جا نوروں کی منڈیوں میں حفاظتی اقدامات نہ ہونے کے برابر ہے کانگو وائرس کاالرٹ بھی جاری ہو چکا ہے تاہم اس حوالے سے حفاظتی اقدامات صفر ہے ۔

لائے جانے والے جانوروں کی مختلف بیماریوں کی ویکسین بھی نہیں لگائی گئی ہے اور نہ ہی کانگو وائرس کی چمڑی چیک کی جا رہی ہے ۔ باڑہ روڈ ، جی ٹی روڈ او رپجگی روڈ پر چھوٹے بڑے جانوروں کی فروخت شروع ہو گئی ہے بیوپاریوں کے مطابق لاک ڈاؤن راستوں کی بندش ، اخراجات میں اضافہ اورٹرانسپورٹ کا خرچہ بڑھنے پر شہریوں کواس وقت قربانی کا جانور چالیس فیصد مہنگا مل رہا ہے ۔

منڈیوں میں چھوٹے بڑے جانور لائے جا رہے ہیں۔ سینٹی ٹائزر گیٹ کہیں بھی نہیں لگائے گئے ہیں جسمانی دوری کا کوئی تصور نہیں ہے خرید وفروخت جاری ہے ۔ جانور گوبر اور دیگر گندگی پر کھڑے ہیں ۔

یہ بھی پڑھیں

حکومتی چہرہ بے نقاب ،اربوں کی کرپشن پر سٹے آرڈرز لئے جاچکے ہیں،ثمر بلور

سابق مشیر اطلاعات کی آڈیو ثبوت ہے کہ صوبے کو ہر طرف سے لوٹا جارہا …