آٹا بحران،85کلو بوری 6800 تک پہنچ گئی آئی ایم ایف کی مہنگائی،بیروزگاری میں مزید اضافہ کی نوید

صوبائی دارالحکومت پشاور میں نانبائیوں نے روٹی 15، پراٹھا 20سے 25 ، روغنی کی قیمت20روپے مقررکردی، سرکاری آٹے کی فراہمی بھی جزوی طور پر بند، بحران شدت اختیار کر گیا،شہریوں کو شدید مشکلات

پشاور؍واشنگٹن(آن لائن؍ ویب ڈیسک ) پشاور میں آٹا بحران مزید شدت اختیار کرنے کے ساتھ 85کلو بوری 6ہزار800روپے تک پہنچ گئی ہے ۔نانبائیوں نے روٹی 15روپے ، پراٹھا 20سے 25روپے ، روغنی 15روپے سے 20روپے تک کردی ہے ۔

آٹا بحران شہر میں شدت اختیار کرنے کے باعث سرکاری آٹے کی فراہمی بھی پیرکے روز سے جزوی طور پر بند رہی جس کے باعث رامپورہ ، اشرف روڈ ، فقیر آباد میں شہریوں کو مشکلات کا سامناکرنا پڑا آٹا ڈیلرز کے مطابق اے گریڈ کے آٹے کی قیمت 6ہزار 500سے 6ہزار 800روپے تک پہنچ گئی ہے دوسری کیٹگری کا آٹا 6ہزار 600تیسری کیٹگری کا آٹا 6ہزار 400، تیسری کیٹگری کا آٹا 6ہزار 100، جبکہ سرخ آٹا تقریباً 6ہزار رپے میں فروخت ہو رہا ہے ۔ صوبائی دارلحکومت پشاور میں آٹا بحران مزید شدت اختیار کر رہاہے ۔دوسری جانب عالمی مالیاتی فنڈ نے رواں مالی سال کے دوران پاکستان میں مہنگائی اور بیروزگاری میں مزید اضافے کی پیشن گوئی کی ہے۔

عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف)کی جانب سے جاری ایک رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ ملک کی مجموعی پیداوار یعنی جی ڈی پی کی شرح منفی سے بہتر ہو کر ایک فی صد ہونے کی توقع کے باوجود رواں برس پاکستان میں مہنگائی کی شرح میں 10.2 فیصد اضافہ ہوگا۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ آئندہ برس مہنگائی کی شرح آٹھ اعشاریہ آٹھ فیصد ہونے کا امکان ہے۔ علاوہ ازیں 2021 میں پاکستان میں بے روزگاری کی شرح 4 اعشایہ 5 فیصد سے بڑھ کر 5 اعشاریہ 1 فیصد ہونے کا بھی خدشہ ہے۔اس بات کا انکشاف عالمی مالیاتی فنڈ کی طرف سے دنیا کے تمام ممالک کی معیشت کے حوالے سے متعلق ایک رپورٹ میں کیا گیا ہے جس میں کرونا وائرس کے اثرات کے تناظر میں آئندہ پانچ سال تک کی معیشت کے اندازے لگائے گئے ہیں۔ اس سے قبل عالمی بینک کی ایک رپورٹ میں بھی پاکستان میں غربت بڑھنے کے خدشات ظاہر کیے جاچکے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

بھول جائیں کیپٹن صفدر کو کس نے گرفتار کیا ،جرم دیکھا جائے،شبلی فراز

پشاور ( آن لائن) وزیر اطلاعا ت و نشریات سینیٹر شبلی فراز نے کہا ہے …

%d bloggers like this: