خیبرپختونخوا میں سینئر سٹیزن ایکٹ کا نفاذ نہ ہوسکا،بزرگ پریشان

قانون پاس ہوئے 6سال مکمل ہوگئے ، صوبے کے 8 لاکھ سے زائدرجسٹرڈبزرگ افراد تاحال حکومتی امداد سے محروم ہیں

پشاور (سٹاف رپورٹر) خیبر پختونخوا حکومت نے بزرگ شہریوں کو بے یار و مدد گار چھوڑ دیا ہے حکومت کی جانب سے بزرگ شہریوں کے قانون پر عمل درآمد نہ ہونے سے بزرگ شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے خیبر پختونخوا حکومت 6 سال گزرنے کے باوجو دسنیئر سٹیزن ایکٹ کے نفاذ میں نا کام رہی جسکی وجہ سے صوبے کے 8 لاکھ سے زائدرجسٹرڈبزرگ افراد حکومتی امداد سے محروم ہیں جبکہ صوبائی حکومت بزرگ شہریوں کو حقوق دلوانے میں غیر سنجیدگی کا مظاہرہ کرنے لگی

سنیئر سٹیزن ایکٹ پر عمل درآمد نہ ہونے سے ماہانہ وظیفہ ، اور رعایتی دوایاں کا حصول ممکن نہ ہوسکا جبکہ قانون پاس ہوئے 6 سال ہوگئے تاہم ابھی تک رجسٹرڈ افراد کو کارڈز جاری نہ ہوسکے اس حوالے سے محکمہ سوشل ویلفیئر کے ڈائر یکٹر کا کہنا ہے کہ بزرگ افراد کے قانون پر عمل درآمد کرنیوالے تھے کہ کورونا آگیا جبکہ ہمارے پاس اتنے پیسے نہیں کہ بزرگوں کو کارڈ جاری کریں اور کورونا کی وجہ سے زیادہ تر ریسورسز محکمہ صحت اور ریلیف کو چلی گئیں ۔

بزرگ شہریوں کا اس حوالے سے کہنا تھا کہ تحریک انصاف حکومت نے ہمارے ساتھ جو وعددے کئے تھے وہ ایفا نہ کر سکی اور حکومت نے ہمیں بے یار و مددد گار چھوڑ دیا ہے بزرگ شہریوں نے وزیر اعظم عمران خان سے مطالبہ کیا ہے کہ سنیئر سٹیزن ایکٹ پر فوری عمل درآمد یقینی بنا کر بزرگ شہریوں کو ریلیف دیا جائے ۔

یہ بھی پڑھیں

‘خیبر پختونخوا میں اب تک 8 ہزار سے زائد ہیلتھ ورکرز کو کورونا ویکیسن دی جاچکی‘

پشاور: خیبر پختونخوا میں کورونا وائرس کی ویکسین لگانے کا سلسلہ جاری ہے اور اب …