پشتون قلم اپنانا چاہتے ہیں، ریاست شہریوں کی جان ومال کے تحفظ کو یقینی بنائے، علی وزیر

مبینہ سی ٹی ڈی مقابلے میں عدنان شنواری کے قتل کی جوڈیشل انکوائری کی جائے، جھوٹے الزامات لگا کر قتل کرنا ظلم ہے، رکن قومی اسمبلی

پاک افغان شاہراہ پر پشاور مقابلے کیخلاف دھرنا ساتویں روز بھی جاری رہا، شرکاء کا انصاف کی فراہمی تک دھرنا جاری رکھنے کا اعلان

لنڈی کوتل(نمائندہ شہباز)ضلع خیبر میںپاک افغان شاہراہ پر چاروازگئی کے مقام پر عدنان شنواری کی مبینہ مقابلے میں ہلاکت کے خلاف دھرنا ساتویں روز بھی جاری رہا۔

جمعہ کے روز دھرنے میں رکن قومی اسمبلی علی ویز نے شرکت کی جن کا شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ریاست شہریوں کی جان و مال کے تحفظ کو یقینی بنائے، پشتون قلم اپنانا چاہتے ہیں وہ ایک علم دوست قوم ہے، ان پر دہشت گردی کا لیبل لگانا ظلم اور نا انصافی ہے۔

انہوں نے کہا کہ عدنان شنواری واقعہ پر جوڈیشل انکوائری بناکر اُن کے خاندان کو انصاف فراہم کیاجائے، پختون قوم اب بیدار ہوچکی ہے جو اپنے حقوق کے حصوصل کیلئے آئینی جنگ لڑسکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریاست اپنی عوام کو بنیادی حقوق فراہم کرنے کیلئے وجود میں آتی ہے لیکن بدقسمتی سے پختون کو بنیادی حقوق حاصل نہیں، جھوٹے الزامات لگانا اور پھر قتل کرنا نا انصافی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ پرامن احتجاج کرنا ہر شہری کا آئینی و قانونی حق ہے کوئی منع نہیں کرسکتا، تحفظ فراہمی میں حکومت اپنا کردار ادا کریں ،احتجاجی دھرنا سے ممبر صوبائی اسمبلی شفیق شیر آفریدی،فرہاد ایڈوکیٹ،سید انور داوڑ ،سیاسی قائدین کے مفتی اعجاز شنواری،شاہ حسین شنواری، شیر مت خان آفریدی، ندیم آفریدی،زاکر آفریدی ،مراد حسین آفریدی اور دیگر سیاسی جماعتوں کے قائدین نے بھی خطاب کیا اورعدنان مرحوم کے خاندان کو انصاف کی فراہمی اور مطالبات تسلیم ہونے تک احتجاجی دھرنا جاری رکھنے کا اعلان کیا۔

یہ بھی پڑھیں

ملک میں کورونا وائرس کے وار جاری، مزید 6افراد جاں بحق، تعداد 61 ہوگئی

اسلام آباد (این این آئی)پاکستان میں کورونا وائرس سے مزید 6 افراد جاں بحق ہوگئے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔