گجوخان میڈیکل کالج صوابی میں کنٹریکٹ پر تعینات ڈاکٹروں کی مستقلی کیلئے صوبائی اسمبلی میں تحریک التواء جمع

پشاور: جماعت اسلامی نے گجوخان میڈیکل کالج صوابی میں تین سالوں سے کنٹریکٹ پر تعینات ڈاکٹروں اورعملہ کی مستقلی کیلئے خیبر پختونخوا اسمبلی سیکرٹریٹ میں تحریک التواء جمع کروائی ہے جس میں حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ  ملازمین کو مستقل آسامیوں پر تعینات کیا جائے۔

 تحریک التواء جماعت اسلامی کے پارلیمانی لیڈر عنایت اللہ خان ،سراج الدین خان اور حمیراخاتون  کی جانب سے جمع   کروائی گئی۔

تحریک التوا کے متن  میں کہا گیا ہے کہ 14سینئر فیکلٹی ممبر ڈاکٹرز اور6نان ڈاکٹرتین سالوں سے ایڈہاک بنیادوں پرتعینات ہیں انہیں کالج میں موجود مستقل آسامیوں پر تعینات کیا جائے۔

عنایت اللہ خان و دیگر اراکین صوبائی اسمبلی نے کہا کہ 2018 میں تعینات ہونے والیڈاکٹرز اورسٹاف ممبرز کو کالج ہذا میں موجود مستقل آسامیوں پر تعینات کیا جائے۔مذکورہ ملازمین قبل ازیں صوبے کے مختلف علاقوں میں پہلے ہی مستقل آسامیوں پر تعینات تھے۔

اراکین صوبائی اسمبلی نے مزید کہا کہ تقرری کے وقت سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر  نےانہیں مستقل کرنے کی یقین دھانی بھی کرائی تھی۔حکومت نے تیسری باران ملازمین کوایک سالہ کنٹریکٹ دیاہے۔

ایم پی اے سراج الدین خان نے کہا کہ مذکورہ ملازمین ان پوسٹوں پرگزشتہ تین سالوں سے خدمات سرانجام دے رہے ہیں۔حالیہ COVID19میں بھی ان ملازمین نے مسلسل بھر پور خدمات سرانجام دیئے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

بنوں کے تاجروں کی مہنگائی اور ناجائز ٹیکسوں کیخلاف احتجاجی تحریک کی دھمکی

بنوں(نمائندہ شھباز) بنوں کی تاجر برداری نے مہنگائی و ناجائز ٹیکسوں کیخلاف احتجاجی تحریک چلانے …

%d bloggers like this: