گرلز ہائی سکول کامبٹ میں تعلیمی سرگرمیاں شروع نہ ہوسکیں، طالبات پریشان

تیمرگرہ (نمائندہ شہباز ) 3سال گزرنے کے باوجود بھی تعمیر ہونے والے گرلز ہائی سکول کامبٹ میں تعلیمی سرگرمیاں شروع نہ ہو سکیں۔ سکول بند ہونے کی وجہ سے سینکڑوں طالبات کا تعلیمی مستقبل داو پر لگ گیا۔

مقامی سیاسی قیادت خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے۔تفصیلا ت کے مطابق کامبٹ میں تین سال پہلے ایک گرلز ہائی سکول تعمیر ہو چکا ہے۔جس کے لئے سٹاف کی منظوری بھی آچکی ہے لیکن تین سال گزرنے کے باوجود بھی اس سکول میں تعلیمی سرگرمیاں شروع نہ ہو سکی۔جس کی وجہ سے کامبٹ کی سینکڑوں طالبات 3 سالوں سے گھروں میں بیٹھ کر ایڈمشن کا انتظار کر رہی ہے۔

اس سلسلے میں جب کامبٹ اور اس کے مضافات کی لڑکیاں گرلز ہا ئی سکول ثمر باغ میں ایڈمشن کے سلسلے میں جاتی ہے تو ان کو اس بنیاد پر داخلہ نہیں دیا جاتا ہے کہ کامبٹ میں اپنا گرلز ہائی سکول موجود ہے اور ثمر باغ کا گرلز ہائی سکول پہلے ہی سے اوور لوڈ ہے۔

اس سلسلے میںمقامی سیاسی قیادت اور منتخب نمائندوں نے مسلسل خاموشی اختیار کی ہے کامبٹ کے غریب عوام نے مقامی ایم این اے،ایم پی اے اور اعلی حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ کامبٹ کے اکلوتے بند گرلز ہائی سکول میں تعلیمی سرگر میاں شروع کی جائے اور سینکڑوں غریب طالبات کی راستے میں موجود رکاوٹوں کو دور کیا جائے اور ان کو کو تعلیم کی حق سے محروم نہ کیا جائے۔.
سکول بند

یہ بھی پڑھیں

مہنگائی کے سونامی میں غریب عوام بہہ چکے ہیں‘حاجی ہدایت اللہ

سینئر ڈاکٹرز عزت نفس مجروح ہونے سے بچنے کیلئے مستعفی ہورہے ہیں ‘ تقریب سے …

%d bloggers like this: