بچوں کے حقوق کا تحفظ عدلیہ کی آئینی ذمہ داری ہے، چیف جسٹس

ڈی آئی خان(نمائندہ شہباز )چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ جسٹس قیصر رشید خان نے ڈیرہ اسماعیل خان سمیت بنوں،کوہاٹ اورسوات کے چاروں اضلاع میں قائم چائلڈ کورٹس کا ورچوئل افتتاح کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق معزز عدالت پشاور ہائی کورٹ پشاور کے جاری کردہ پانچ سالہ ترمیم شدہ نئی یونٹ پالیسی کے تحت خیبر پختونخوا میں بہتری کے لیے اصلاحات کا عمل جاری ہے جس کے تحت انقلابی اقدام اٹھاتے ہوئے خیبر پختونخوا کے مزید چار اضلاع میں چائلڈ پروٹیکشن کورٹس کا کامیاب اجراء کیا جا چکا ہے، اب خیبرپختونخوا میں چائلڈ کورٹس کی کل تعداد 8 ہو گئی ہے۔

اس ضمن میں چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ قیصر رشید خان نے ڈیرہ اسماعیل خان سمیت بنوں، کوہاٹ اور سوات میں چائلڈ پروٹیکشن کورٹس کا باقاعدہ ورچوئل افتتاح کر دیا جویقینی طور پر بچوں کے بڑھتے ہوئے جنسی استحصال کے واقعات کی روک تھام میں معاون ثابت ہو گا۔تقریب کے ابتدائی کلمات میں ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج ڈیرہ اسماعیل خان محمد یونس خان نے آن لائن تقریب میں شرکت کرنے والے چیف جسٹس قیصر رشید خان، رجسٹرار خواجہ وجیہ الدین، جج صاحبان و دیگر افسران کو خوش آمدید کہا۔

اس افتتاحی تقریب کے موقع پر چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ قیصر رشید خان نے بچوں کے تحفظ کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ معاشرے میں بچوں کے حقوق کا تحفظ اور انہیں دوستانہ ماحول میں انصاف کی فوری فراہمی عدلیہ کی آئینی ذمہ داری ہے۔ افتتاحی تقریب میں چاروں اضلاع کے ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن ججز، ایڈیشنل سیشن ججز، سینئر سول جج ایڈمن اوربار کے صدور نے بھی اپنے اپنے ضلع سے آن لائن شرکت کی۔

یہ بھی پڑھیں

پشتو زبان کے معروف شاعر اور ادیب سلیم رازسپرد خاک

چارسدہ شبقدر(نمائندگان شہباز) صدارتی ایوارڈ یافتہ پشتو ادیب، معروف ترقی پسند، انقلابی شاعر، ادیب، صحافی …